اتر پردیشہندوستان

اجتماعی قربانی کرانے والے حصہ داروں کے وکیل ہوتے ہیں

کل ہند اسلامک علمی اکیڈمی کی ماہانہ نشست اختتام پذیر، دور جدید کے متعدد مسائل پر غور و خوض

کانپور12اگست(حافظ محمد ذاکر) دور جدید میں پیش آنے والے نئے اور پیچیدہ مسائل کے حل کیلئے شہر کانپور کے جید علماء و مفتیان پر مشتمل کل ہند اسلامک علمی اکیڈمی کی ماہانہ نشست عصر تا عشاء اکیڈمی کے آفس جمعیت بلڈنگ رجبی روڈ میں اکیڈمی کے صدر مولانا محمد متین الحق اسامہ قاسمی کی صدارت میں منعقد ہوئی جس میں دور جدید کے کئی پیچیدہ اور اہم مسائل پر قرآن و سنت کی روشنی میں غور و خوض کے بعد حتمی فیصلہ لیا گیا۔میٹنگ کا آغاز مفتی سعود مرشد کی تلاوت کلام پاک سے ہوا۔ میٹنگ میںمفتیان کرام نے متفقہ طور پر واضح کیا کہ اجتماعی قربانی کرانے والے افراد یا ادارے قربانی کے حصے لینے والوں کے وکیل ہوتے ہیں قربانی کے تمام شرائط کی رعایت کے ساتھ قربانی کرانا ان کی ذمہ داری ہے ۔ نیز جو رقم قربانی سے بچتی ہے قربانی کے تمام اخراجات وغیرہ کے بعد وہ رقم حصہ دارں کو واپس کرنا لازم ہے ۔ البتہ جس حصہ لینے والے نے پیشگی اجازت اس کی دے دی ہو کہ زائد بچی رقم وہ ادارہ میں لگا دے تو پھر وہ رقم ادارہ کیلئے جائز ہوگی۔ دوسرے مسئلہ میںکہ کیا عصمت دری سے بچنے کیلئے عورت اپنے کو ہلاک کر سکتی ہے یعنی خودکشی کی اجازت ہے کہ نہیں پر طے پایا کہ اپنی عزت و ناموس کو بچانے کیلئے جبکہ کسی خاتون کو یہ یقین ہو کہ یہ شرپسند عصمت دری بھی کریں گے اور جان سے بھی مار دیںگے اس لئے وہ اپنے کو ہلاک کرے تو اگرچہ اس طرح اپنے کو ہلاک کرنے کی فقہاء نے اجازت نہیں دی ہے لیکن اگر کوئی خاتون اس طرح کا اقدام کرے تو وہ اپنی نیت کے مطابق انشاء اللہ گنہگار نہ ہوگی اور اگر دشمن کے ہاتھوں ماری جاتی ہے تو وہ بلاشبہ شہید ہوگی۔ تیسرے مسئلہ جو بے قصور مسلما ن کفار کے ہجومی تشدد یا ظا لموں کے ہاتھوں ناحق مارا جائے اور وہ موقع پر ہلاک بھی ہو جائے تو وہ حقیقی شہید کے حکم میں ہے لہٰذا اس کو اسی کپڑوں میں بلا غسل کے نماز جنازہ پڑھ کر دفن کیا جائے گا۔ (اصل مسئلہ یہی ہے باقی ارباب جل وعقد حالات و قوانین کے تحت جو فیصلہ کریں اس کے مطابق عمل کرنا چاہئے ۔) کرایہ کی دکان میں وراثت کا مسئلہ نیز میت کے اہل خانہ کی عید کی خوشی منانے کا مسئلہ اگلی نشست میں زیر بحث آئیں گے۔ میٹنگ میں اگلی نشست 9؍ستمبر2018 مطابق 28؍ذی الحجہ بروز اتوار جمعیۃ بلڈنگ میں طے پائی گئی ۔ نشست میں اکیڈمی کے صدر مولانا محمد متین الحق اسامہ قاسمی، نائب صدر مولانا خلیل احمد مظاہری، جنرل سکریٹری مفتی اقبال احمد قاسمی اور سکریٹری مفتی عبدالرشید قاسمی کے علاوہ دیگر ممبران مفتی اسعد الدین قا سمی، مفتی سید محمد عثمان قاسمی، مفتی سعد نور قا سمی، مولانامحمد انعام اللہ قاسمی، مولانا محمد انیس خاں قاسمی، مفتی اظہار مکرم قاسمی ،مفتی سعود مرشد،مولانا مفتاح قاسمی، مولانا مفتی محمد دانش قاسمی،قاری عبد المعید چودھری موجود تھے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close