بہارپٹنہ

الحاج غلام سرور کی طرح آج کوئی قائد دور دور تک نظر نہیں آتا: امتیازکریمی

پٹنہ: غلام سرور ایک ہمہ جہت اور قد آور شخصیت کا نام ہے۔انہوں نے پوری زندگیقوم و ملّت کی خدمت میں گزار دی۔ وہ ایک صحافی،مقرر، نہایت بلند پایہ سیاست داں اور بہار میں اردو تحریک کی صف اول کےقائد تھے۔اب ان کی طرح سے کوئی بھی قائد نظر نہیں آتا ہے۔چاروں طرف خلاءہی خلاء ہے۔ غلام سرور نے اپنی صحافت، خطابت اور قیادت سے ملک و ملت کی کامیابیوں کی راہیںنکالیں ۔ یہ وہ خیالات ہے جن کا اظہارجمعرات کے روز اردو ڈائرکٹوریٹ میں الحاج غلام سرور کے یوم پیدائش کے موقع پر منعقد یادگاری جلسے سے خطاب کرتے ہوئے ڈائریکٹر امتیاز احمد کریمی نے کیا۔
امتیاز کریمی نے کہا کہ یہ غلام سرور اور ان کی تحریک کے رفقاء کی کوششوں کا ثمرہ ہے کہ اردو 1981 سے ریاست کی دوسری سرکاری زبان کے طور پر سرفراز ہے۔ انہوں نے اردو کے حوالے سے مختلف شعبوں میں آئی تبدیلیوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ آج ریاست میں بڑی تعداد میں اردو عملہ برسرکار ہیں۔ انہوں نے ایک خوشگوار اتفاق کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ 17 اپریل 1981 کو اردو ریاست کی دوسری سرکاری زبان کی حیثیت سےمعزز ہوئی تھی اور تقریبا تین دہائیوں کے بعد 17 اپریل ، 2018 کو ریاست کے مختلف اہم دفاتر کیلئے اردو داں نوجوانوں کے لئے 1765 نئے عہدوں کی توضیع عمل میں آئی۔
امتیاز احمد کریمی نے غلام سرور اور اردو تحریک سے جڑی مختلف شخصیات کا ذکر کرتےہوئے کہا کہ ان لوگوں نے اردو کے حوالے سے بہار میں تاریخ ساز کارنامے کی جو داغ بیل ڈالی اس کی تقلید مختلف ریاستوں نے کی ہے۔ بہار سے اٹھی اس کامیاب تحریک کی ہی دین ہے کہ آج کئی ریاستوں میں اردو کو دوسری سرکاری زبان کے اعزاز سے نوازے جانے کا سلسلہ جاری ہے۔ اپنے خطاب کے آخر میں امتیاز احمد کریمی نے غلام سرور کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ اپنے گھر اور معاشرے میں اردو کی ترویج وتوسیع کیلئے ہماری ایماندارانہ کوشش ہی صحیح معنوں میں غلام سرور کے لئے سچا خراج عقیدت ہے۔
اس موقع پر محمد نور عالم اور محمد اسلم جاوداں نے بھی غلام سرور اور ان کے تحریکی مزاج و میلان کے حوالےسے اپنے خیالات کااظہار کیا۔ جلسہ میں ڈاکٹر خورشید انور، سید مجتبیٰ حسن، سید پرویز انجم،زبیر احمد، حسیب الرحمن انصاری ،سید شاہ قیصر رضوی،جہانگیر انصاری،افضل عالم،امینہ خاتون، عشرت خاتون ،شفیع احمد، حسن آرا، محمد حامد، رام بہادر، کفیل احمد، مختار احمد، شفقت جمال،یحییٰ فہیم،محمد سعید احمد، محمد اشفاق، محمد شاکر،محمد عامر، شکیب ایاز اور محمد شارق نے غلام سرور کے لئے دعائے مغفرت کی۔جلسہ کاآغازمیں ناسک حسن شاکرین نے چند آیات کریمہ کی تلاوت کی اور غلام رسول قریسی نے بارگاہ رسالت میں نذرانہ عقیدت ومحبت پیش کیا۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close