فلم

آرنلڈ شوازنیگر نے خواتین کے ساتھ نازیبا سلوک پر معافی مانگ لی

لاس اینجلس:ہولی وڈ اداکار، سابق ویٹ لفٹر، سیاستدان، سماجی کارکن اور فلم ساز آرنلڈ شوازنیگر نے خواتین کے ساتھ نازیبا سلوک کا اعتراف کرتے ہوئے اپنے رویے پر معاف مانگ لی۔خیال رہے کہ 71 سالہ آرنلڈ شوازنیگر نے پروفیشنل ویٹ لفٹر اور باڈی بلڈر کے طور پر کیریئر کا آغاز کیا، بعد ازاں وہ اداکاری کے شعبے میں آئے۔آرنلڈ شوازنیگر نے باڈی بلڈر کے زمانے میں ہی شہرت حاصل کی اور ان کی باڈی کے دنیا بھر میں چرچے رہتے تھے۔انہوں نے باڈی بلڈنگ کے طریقوں پر کتابیں بھی لکھیں اور ان کے ایسے نسخوں سے دنیا بھر کے کئی افراد نے استفادہ بھی حاصل کیا۔آرنلڈ شوازنیگر پر باڈی بلڈنگ کے کیریئر کے دوران ہی خواتین کے ساتھ نازیبا سلوک اور جنسی طور پر ہراساں کرنے کے الزامات لگتے رہے، کئی خواتین نے ان پر بھری محفل اور لوگوں کے سامنے ہی جنسی طور پر چھونے کے الزامات لگائے۔بعد ازاں آرنلڈ شوازنیگر نے اداکاری میں قسمت آزمائی اور خوش قسمتی سے وہ اس میں بھی کامیاب گئے اور اب تک وہ درجنوں ایکشن اور تھرلر فلموں میں اداکاری کے جوہر دکھا چکیہیں۔چوں کہ وہ باڈی بلڈر بھی رہ چکے تھے، اس لیے اداکاری کے دوران پرکشش ہونے کی وجہ سے ان کے کئی اداکاراؤں کے ساتھ تعلقات بھی رہے اور متعدد خواتین نے ان پر ہراساں کرنے کے الزامات بھی عائد کیے۔کامیاب اداکاری کے بعد آرنلڈ شوازنیگر نے 2003 میں امریکی ریاست کیلی فورنیا کے گورنر کے انتخابات میں حصہ لیا اور کامیاب ہوگئے، یوں وہ اسی ریاست کے 38 ویں گورنر منتخب ہوئے۔آرنلڈ شوازنیگر نے 2003 سے 2011 تک دو بار اسی ریاست کی گورنر شپ کی ذمہ داریاں نبھائیں۔گورنر کے انتخابات کے دوران بھی ان پر خواتین نے جنسی طور پر ہراساں کرنے کے الزامات لگائے، تاہم انہوں نے ان الزامات کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے اپنے خلاف سازش قرار دی۔تاہم اب پہلی بار اداکار اور سیاست دان نے اعتراف کیا ہے کہ وہ متعدد بار خواتین کے ساتھ سلوک اور رویہ اختیار کرنے کے دوران حدود پار کر گئے، جس پر انہیں افسوس ہے۔خبر وں کے مطابق آرنلڈ شوازنیگر نے ویب سائیٹ ‘مینز ہیلتھ’ کو دیے گئے خصوصی انٹرویو میں اعتراف کیا کہ انہوں نے خواتین کے معاملے میں متعدد بار اپنی حدود سے تجاوز کیا۔آرنلڈ شوازنیگر نے اپنے رویے پر شرمساری کرتے ہوئے تمام خواتین سے معافی بھی مانگی، ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ وہ ہی وہ پہلے شخص ہیں، جنہیں اپنے رویے پر شرمدنگی ہے، اس لیے وہ متاثرہ خواتین سے معافی کے طلب گار ہیں۔آرنلڈ شوازنیگر نے کہا کہ جب وہ کیلی فورنیا کے گورنر بنے تو انہیں نے جنسی طور پر ہراساں کیے جانے کے حوالے کورسز کروانے کا اہتمام کیا، تاکہ کبھی بھی کوئی کسی کو ہراساں نہ کر سکے۔سابق گورنر کے مطابق ان کی جانب سے متعارف کرائے گئے کورسز میں لوگوں کو بتایا گیا کہ جنسی طور پر ہراساں کیا جانا کیا ہے اور اس سے کیسے بچا جاسکتا ہے۔انٹرویو میں آرنلڈ شوازنیگر نے کہا کہ وہ ہمیشہ خواتین کے عزت کرتے آئے ہیں، وہ اپنی والدہ سمیت باہمت اور خوبصورت خواتین کو ہمیشہ عزت کی نگاہ سے دیکھتے آئے ہیں۔آرنلڈ شوازنیگر نے ایک ایسے وقت میں خواتین کے ساتھ نازیبا سلوک پر معافی مانگی ہے، جب کہ ہولی وڈ سمیت دنیا بھر میں خواتین کے ساتھ نازیبا رویوں اور انہیں ہراساں کیے جانے کے حوالے سے ‘می ٹو’ مہم جاری ہے۔اسی مہم کے تحت ہولی وڈ کی کئی اداکاراؤں نے مشہور اداکاروں اور فلم سازوں پر بھی جنسی طور پر ہراساں اور ریپ کے الزامات عائد کر رکھے ہیں۔علاوہ ازیں اب اسی مہم کے تحت بھارتی خواتین نے بھی متعدد اداکاروں، فلم ہدایت کاروں، سیاست دانوں اور صحافیوں پر بھی جنسی طور پر ہراساں کرنے اور ریپ کے الزامات عائد کیے ہیں۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close