پٹنہ

ایس سی ایس ٹی کے حقو ق کو کوئی چھین نہیں سکتا : نتیش

پٹنہ :بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے درج فہرست ذات و قبائل( ایس سی/ایس ٹی ) کمیونٹی کے لوگوں کے حقوق کو لیکر سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ملک کی سیاست میں مچے گھماسان کے درمیان آج دعویٰ کیا کہ ایس سی ، ایس ٹی کے حقوق کو کوئی چھین نہیں سکتا ۔ مسٹر کمار نے یہ بات یہاں درج فہرست ذات و قبائل صنعتی منصوبے کے آغاز کے موقع پر منعقدہ ریاستی سطح کے پروگرام کے افتتاح کے موقع پر کہی ۔ کچھ لوگ منفی باتیں کرتے ہیں اور یہ ان کی عادت میں شامل ہے ۔ میں مثبت ڈھنگ سے کام کرنے میں یقین رکھتاہوں ۔ ایس سی ، ایس ٹی کے حقوق کو کوئی چھین نہیں سکتا ہے ۔ اس زمین سے ریزرویشن کوئی ختم نہیں کر سکتاہے ۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ ایس سی ، ایس ٹی سے متعلق سپریم کورٹ کے دیئے گئے فیصلے کے خلاف مرکزی حکومت آر ڈیننس لانے جارہی ہے ۔کسی کو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں ہے ۔ انہوں نے کہاکہ صرف بولنے سے حقوق نہیں ملتے بلکہ اس کے لئے ضروری اقدامات کرنے پڑتے ہیں اور مثبت پہل کرنی پڑتی ہے ۔ لوگ پڑھیں گے تبھی بڑھیں گے ۔ مسٹر نتیش کمار نے کہاکہ بہار میں پہلی بار ان کی حکومت بننے کے بعد جب سروے کرایا گیا تو پتہ چلا کہ 12.50فیصد بچے اسکول سے باہر ہیں ، ان میں سے سب سے زیادہ اقلیت اور دلت سماج کے بچےتھے۔ اقلیتی سماج اور درج فہرست ذاتوں کے بچوں کو تعلیم یافتہ بنانے کیلئے ٹولہ سیوک اور تعلیمی مرکز بحا ل کئے گئے ۔ انہوں نے کہاکہ ریاست میں تعلیم کی صورتحال کو بہتر بنانے کیلئے 22سے 23لاکھ نئے اسکولی کمروں کی تعمیر کرائی گئی ہے اور لاکھوں اساتذہ بحال کئے گئے ۔ حکومت اور عوام کے درمیان رابطہ کے لئے وکاس متروں کی بحالی کی گئی ۔وزیراعلیٰ نے ایس سی ، ایس ٹی صنعتی منصوبہ کے شروع ہونے پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ د و مہینے قبل اس منصوبہ کا خاکہ تیار کیا گیا اور آج اس کی شروعات ہوئی ہے۔ اس منصوبہ کے تحت تین ہزار درخواستیں موصول ہوئی ہیں ، ان میں سے 500۔ لوگوں کا انتخاب ہواہے اور اب انہیں ٹریننگ کرنی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ 135لوگوں کو ٹرینڈ کیا جاچکا ہے اور 150لوگوں کی ٹریننگ شروع ہورہی ہے ۔ اس منصوبہ کے مستفیدین کے لئے کم سے کم اہلیت انٹر میڈیٹ ہے ۔ انہیں خوشی ہے کہ مستفدین کی فہرست میں گریجویٹ ( سائنس ) ، پوسٹ گریجویٹ ( سائنس )، گریجویٹ ( ٹیکنالوجی) انڈسٹریل ٹریننگ ادارہ ( آئی ٹی آئی ) سے ڈگری ہولڈر لوگوں کا انتخاب ہوا ہے ۔ ایسے انٹر پرینر ایس سی اور ایس ٹی سماج کے لوگوں کی حوصلہ افزائی بھی کریں گے ۔مسٹر کمار نے کہاکہ پہلے سے جاری منصوبوں کا فائدہ بھی ایس سی ۔ ایس ٹی کمیونٹی کے لوگوں کو ملتا رہے گا۔ اس منصوبہ کے تحت مستفدین کو 10لاکھ روپے کی رقم ملے گی ، جس میں پانچ لاکھ روپے کی رقم خصوصی حوصلہ افزائی منصوبہ کے تحت گرانٹ کی شکل میں دستیاب ہوگی۔ وہیں بقیہ پانچ لاکھ روپے بغیر سود کی شکل میں 84 قسطوں میں ادا کرنی ہوگی ۔ یہ قسط تب سے شروع ہوگی ، جب صنعت کی شروعات ہو جائے گی ۔ انہوں نے کہاکہ انہیں خوشی ہے کہ اپنے بہار کے ایس سی ۔ ایس ٹی سماج کے نوجوان ہر طرح کی صنعت اپنی ریاست میں شروع کر سکیں گے ۔ انہوں نے کہاکہ ایس سی ایس ٹی کمیونٹی کے لڑکے ۔ لڑکیاں اسے لاگو کر خود تو مستفید ہوں گی ہی ، ساتھ دوسروں کوبھی روزگار دستیاب کرائیں گی۔ سبھی اضلاع سے مستفیدین کا انتخاب ہواہے ۔ انہیں امیدہے کہ منتخب مستفیدین بہتر طریقہ سے کام کریں گے اور اچھے مظاہرہ سے اپنے سماج کی حوصلہ افزائی کریں گے ۔
وزیر اعلیٰ نے کہاکہ جب تک مثبت سوچ نہیں ہوگی ، تب تک سماج کی ترقی نہیں ہوسکتی ۔ ان کی حکومت نے ہر طبقہ کے لئے کام کیا ہے ۔ کمزور طبقات ، خواتین ، ایس سی۔ ایس ٹی کی بہتری کے لئے کام کیا ہے ۔ ایس سی ۔ ایس ٹی کمیونٹی کے لوگوں کو مین اسٹریم سے جوڑنے کے لئے کئی قدم اٹھائے گئے ہیں ۔ دلتوں کے اسکل ڈیولپمنٹ کیلئے کام کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ اب مہادلتوں کو ملنے والی خصوصی سہولیات ایس سی۔ ایس ٹی طبقہ کے لوگوں کو بھی ملیں گی ۔ ایس سی ۔ ایس ٹی ٹولے میں کمیونٹی بلڈنگ کی تعمیر کی جارہی ہے ۔ کسانوں کیلئے زرعی روڈ میپ لایا گیاہے ۔ ریاست میں صنعت کو بڑھاوا دینے کیلئے سرمایہ کاری ضابطہ لاگو کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ سماج کے سبھی طبقات کے لئے کام کیا گیاہے اور جو سماج کے مین اسٹریم سے پیچھے چھوٹ گئے ہیں انہیں جوڑنے کیلئے خصوصی طور سے کام کیا جارہاہے ۔مسٹر کمار نے کہاکہ ریاست میں 93لاکھ خواتین آٹھ لاکھ سے زائدخود امدادی گروپ کے توسط سے جڑ کر ان کے علاقوں کیلئے کام کر رہی ہیں۔ دس لاکھ خود امدادی گروپ بنانے کا ہدف ہے ۔ سال 2015 میں سات یقینی منصوبے کی شروعات کی گئی ، جس کے تحت ترقی کے کئی کام کئے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ شراب بندی کا فائدہ سبھی طبقات کو مل رہاہے لیکن اس کاروبار پر جو لوگ منحصر تھے ، ان کے لئے ستو روزی روٹی منصوبہ کے تحت اختیاری روزگار کا انتظام خود امدادی گروپ کے توسط سے کی جارہی ہے .
انہوں نے کہاکہ ایس ۔ ایس ٹی کے لئے تعمیر پرانے گرلس ہاسٹل کی تجدید کے ساتھ ہی نئے گرلس ہاسٹلوں کی تعمیرکرائی جارہی ہے ۔ دونوں کمیونٹی کے طلباءکیلئے فی ماہ 1000روپے کی اسکالرشپ اور مفت میں اناج دستیاب کرانے کا بھی منصوبہ ہے ۔وزیراعلیٰ نے صنعت محکمہ سے کہاہے کہ مسلسل درخواستیں آتی رہیں اور ان میں سے انتخاب ہوتا رہے اور ٹریننگ بھی جاری رہے ۔ اس تعلق سے کوئی پریشانی ہورہی ہے تو اس کے لئے تجویزلائے جائیں ۔ ایسا نظام فروغ دیا جائے جس میں اس سے متعلق مشکلات کا حل ہوسکے ۔ پروگرام کو صنعت کے وزیر جے کمار سنگھ ، تعمیرعمارت کے وزیر مہیشور ہزاری ، ٹرانسپورٹ کے وزیر سنتو ش کمار نرالہ ، ثقافت کے وزیر کرشن کمار رشی ، درج فہرست ذات اور درج فہرست قبائل فلاح کے وزیر رمیش رشیدیو ، ممبر اسمبلی شیام رجک ، ایم ایل سی اشوک چودھری، صنعت محکمہ کے پرنسپل سکریٹری ڈاکٹر ۔ ایس ۔ سدھارتھ نے بھی خطاب کیا ۔
اس موقع پر ایم ایل اے پر بھو ناتھ ، ایم ایل سی دلیپ چودھری اور رام چندر بھارتی، دلت انڈین چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹریز کے ریاستی صدر دنیش پاسوان ، اسٹیٹ درج فہرست ذات کمیشن کے سابق چیئر مین ودیا نند ویکل ، اسٹیٹ مہادلت کمیشن کے ساب چیئر مین ہولیس مانجھی ، بہار ریاست ہست کرگھا بن کر سہیوگ سنگھ لمیٹیڈ کے چیئرمین نقیب انصاری ، بہار انڈسٹریز ایسو سی ایشن کے چیئر مین کے ۔ پی ۔ ایس کیشری، چندر گپت منجمنٹ انسٹی چیوٹ کے ڈائریکٹر بی مکند داس ، ڈیولپمنٹ کمشنر ششی شیکھر شرما ، وزیراعلیٰ کے سکریٹری منیش ورما، بہار مہادلت ویکاس مشن کے ایکزیکٹیو افسر گوپال سنگھ سمیت صنعت محکمہ کے دیگر سنیئر افسران اور دیگر مستفیدین موجود تھے ۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close