بہار

ایک گاؤں جہاں ایک بھی شخص تعلیم یافتہ نہیں ہے، رنگ سے کرتے ہیں روپے کی شناخت

گیا:ایک طرف ہم چاند پر گھر بسانے کی بات کرتے ہیں تو وہیں ایک علاقہ ایسا بھی ہے جہاں بنیادی سہولیات نہ کے برابر ہے اور لوگ قدیم زمانے کی طرھ زندگی بسر کرتے ہیں۔ 120 لوگوں کے ٹولے میں ایک بھی شخص تعلیم یافتہ نہیںہے۔ روپے کی شناخت بھی اس کا رنگ دیکھ کر کرتے ہیں۔ حکومت کا کوئی منصوبہ آج تک یہاں سرے نہیں پہنچا ۔ہم بات کر رہے ہیں گیا ضلع کی كٹھوتيا كیوال پنچایت کے برہور ٹولے کی۔ بلاک سے 15 کلو میٹر دور جنگل میں آباد برہور ذات کے لوگ آج بھی نظرانداز ہیں۔ بہار میں ختم ہونے کے دہانے پر پہنچ چکے اس ذات کے لوگوں کی ترقی کے لئے حکومت نے پہل تو کی پر توقع سے بہت کم۔ایک دہائی پہلے اس ٹولے کی ذمہ داری ریاستی حکومت نے لی تھی۔ سہولیات ملنے سے کچھ وقت تک ان کے حالات بہتر ہوئے۔ نیم ننگا رہنے والے برہور ذات کے تن پر کپڑے تو چڑھےپر سماجی اور اقتصادی طور پر مضبوط نہیں ہو سکے۔ وقت کے ساتھ ہی ترقی کی رفتار سست پڑ گئی اور آج پھر اسی حالت میں پہنچ گئے۔
مسواک اور بیل فروخت کرکرتے ہیں گزارا:
برہور ذات کے لوگ جنگل سےمسواک اور بیل توڑکر لاتے ہیں اور پھر ارد گرد کے علاقوں میں فروخت کرتے ہیں۔ اس سے تھوڑی بہت جو کمائی ہوتی ہے اس سے کپڑے اور گزر بسر کا سامان خریدتے ہیں۔ ایک دو لوگ کبھی کبھار کوڈرما میں مزدوری کرنے جاتے ہیں۔
رنگ دیکھ کر روپیوں کی کرتے ہیں شناخت:
120 لوگوں کی آبادی والے اس ٹولے میں اسکول تو ہے پر وہ کبھی کبھار ہی کھلتا ہے۔ ٹولے میں ایک بھی شخص تعلیم یافتہ نہیں ہے۔ رنگ دیکھ کر روپیوں کی شناخت کرتے ہیں۔دنیاداری کی کوئی سمجھ نہیں ہے۔
سنتھالي زبان میں کرتے ہیں بات:
دنیا کی سب سے قدیم زبان ہی استعمال کرتے ہیں۔ دوسرے لوگوں سے بات کرنے میں بھی ہچکچاتے ہیں۔ ٹولے کے ایک دو لوگ ٹوٹی پھوٹی نکشہدي اور مگہي مخلوط زبان استعمال کر پاتے ہیں۔ ان بولی عام لوگ سمجھ نہیں پاتے ہیں۔
چاپاکل خراب، اجتماعی بیت الخلا خستہ:
برہور ٹولے میں 11 چاپاکل، آنگن باڑي مرکز، پرائمری اسکول، سولر سسٹم سمیت دیگر بنیادی سہولیات فراہم کی گئی تھیں۔ لیکن افسران کیسست روی کی وجہ سےتمام ہاتھی کے دانت ثابت ہو رہے هیں۔ نو چاپاکل میں سے 8 خراب ہو گئے۔ اجتماعی بیت الخلا کیحالت اچھی نہیں ہے۔
کیا کہتے ہیں افسر
بی ڈی او كمند رنجن نے کہا کہ برہور ٹولا میں وقت وقت پرمعائنہ کرکے ان کی حیثیت کا تعین کیا جاتا ہے۔بہت سے لوگوں کا نام وزیر اعظم رہائش منصوبہ میں دیا گیا ہے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close