بہارپٹنہ

بدحواس بی جے پی کی رام مندر پر سیاست شرمناک: شیوانند

آئندہ لوک سبھا انتخابات میں ان کے پاس کوئی مدعا نہیں

پٹنہ،8؍نومبر : جیسے جیسے لوک سبھا انتخابات قریب آرہے ہیں، ویسے ویسے رام مندر کا معاملہ طول پکڑنے لگا ہے۔ ایک جانب جہاں بی جے پی اس معاملےپر بیان بازی کر رہی ہے ، وہیں اپوزیشن کی جانب سے بھی حملے جاری ہیں۔ آر جے ڈی کے سینئر لیڈر شیوانند تیواری نے رام مندر کے مدعے پر بی جے پی کو گھیرا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بدحواس بی جے پیہ جس طرح بھگوان رام کو کیچڑ میں گھسیٹ رہی ہے، وہ شرمناک ہے۔
شیوانند تیواری نے مزید کہ اکہ عوام کے درمیان جاکر اپنے کام کے زور پر ووٹ مانگنے کی ان کو ہمت نہیں ۃے۔ ایسا کوئی کام انہوں نے کیا ہی نہیں ہے جس کو دکھا کر دوبارہ اقتدار میں جانے کی حمایت یہ عوام سے مانگ سکیں۔ اس لئے غیر مذہبی لوگ رام مندر اور ہندو مذہب کے نام پر ووٹ پانا چاہتے ہیں۔ لیکن عوام کے سامنےان کی پول کھل چکی ہے۔ ملک کے دوام کےموڈ کا اندازہ ابھی کرناٹک کے ضمنی انتخابات میں لگا ہے۔ اس نتیجے سے ان کی بے چینی مزید بڑھ گئی ہے۔
مسٹر تیواری نے کہا کہ ان کی کوشش ہوگی کہ جگہ جگہ فرقہ وارانہ فسادات کرا کر ووٹ حاصل کریں ۔ اس کام میں ان لوگوں کو مہارت حاصل ہے۔ ان کا آخری سہارا یہی ہے۔ اس لئے جو بھی ان ملک کے غداروں کو ملک کے مفاد میں اقتدار سے بے دخل کرنا چاہتے ہیں، ان کی ذمہ داری ہے کہ بیدار اور ہوشیار رہیں اور ان کی سازش کو کامیاب نہ ہونےد یں۔
یادر ہے کہ مرکزی وزیر گری راج سنگھ نےکہاتھا کہ رام مندر کو لے کر سوا کروڑ لوگوں میں بے چینی ہے۔ اس لئے اس پر کورٹ اور حکومت کو غور کرنے کی ضرورت ہے۔ مرکزی وزیر مملکت مسٹر گری راج سنگھ نے کہا کہ رام مندر کا آرڈیننس راجیہ سبھا ممبر راکیش سنہا پرائیوٹ بل کو لے کر آرہے ہیں۔ اس میں سوکروڑ ہندوئوں کی عزت ہے ۔ اس لئے رام مندر بنانے سے کوئی نہیں روک سکتا۔
ادھر بہار کے نائب وزیر اعلیٰ سشیل کمار مودی نےرام مندر کے معاملے پر بڑا بیان دے کر سب کو چونکا دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسجد تو کہیں بھی تعمیر ہوسکتی ہے لیکن رام مندر کہیں اور نہیں بن سکتا ۔ مودی نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ سپریم کورٹ جلد سے جلد ایودھیا معاملے پر سماعت کر کے فیصلہ دے، کیوں کہ ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کروڑوں ہندوئوں کی خواہش ہے ۔ انہوںنےکہا کہ جب سپریم کورٹ آدھی رات میں کرناٹک حکومت سے جڑے فیصلے کر سکتا ہے، ہم جنسی پر فیصلہ دے سکتا ہے تو پھر رام مندر کا معاملہ برسوں سے عدالت میں کیوں زیر التوا ہے؟

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close