پٹنہ

بہار میں پینے والوں کے ساتھ کھلانے والوں پر بھی نظر

پٹنہ: بہار پولیس کے نشانے پر اب اسمگلنگ کے ذریعے دیگر ریاستوں سے شراب لانے والوں کے ساتھ ساتھ اس کا ذخیرہ اور ترسیلی کرنے والے لوگ اور گروہ بھی ہیں۔ حق اطلاعات کے تحت ریاستی پولیس ہیڈکوارٹر سے مانگی گئی معلومات کے جواب سے پتہ چلا ہے کہ گزشتہ 14 مہینوں میں ریاست بھر سے شراب اسمگلنگ، اس اسٹوریج اور تقسیم میں 30،112 لوگوں کو دبوچا گیا ہے۔ اس کے علاوہ 26،601 لوگوں کو اس درمیان شراب کے نشے میں گرفتار کیا گیا ہے۔
30 ہزار دھندے باز دھراے:
بہار میں 5 اپریل، 2016 سے لاگو مکمل شراب بندی کے بعد شراب پینے، فروخت اور ذخیرہ کرنے والے کل ڈیڑھ لاکھ افراد کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔ لیکن، پھر شراب کی اسمگلنگ، سٹوریج اور ترسیلی کرنے والے لوگوں کی گرفتاری کا کوئی واضح اعداد و شمار پولیس کے پاس نہیں تھا۔ 14 مہینوں میں ریاست بھر سے 74،274 لوگوں کو شراببندی قانون کے تحت گرفتار کیا گیا ہے۔جن 30،112 دھندے باز شامل ہیں۔ یہ اعداد و شمار پولیس ہیڈکوارٹر نے ماضی 10 مئی، 2017 کی طرف سے جمع کیا ہے۔
سب سے زیادہ گرفتاری پٹنہ زون سے:
سب سے زیادہ گرفتاری پٹنہ زون سے ہوئی ہے۔ پٹنہ زون سے گزشتہ 14 مہینوں میں شراب کے 2700 سپلائرز کو گرفتار کیا گیا ہے۔جبکہ گھروں تک شراب پہنچانے کے الزام میں 12،403 لوگوں کو گپھتار کیا گیا ہے. اسی طرح شراب کےا سٹوریج صورت میں پٹنہ سے گزشتہ 14 مہینوں میں 517 افراد کی گرفتاری ہوئی ہے۔14 ماہ کے دوران شراب کی جبتی، تھانوں کے مال خانو میں اس کو محفوظ رکھنے میں لاپرواہی برتنے اور مقامی شراب مافیا کے ساتھ ساز باز کرنے والے کل 115 پولیس عہدیداروں اور اہلکاروں پر بھی کارروائی ہوئی ہے۔ ان میں 62 پولیس عہدیدار اور 53 پولیس اہلکار شامل ہیں۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close