متھلانچل

بینی پور کا دیورام امیٹھی پنچایت اسکول کی سہولت سے محروم

دربھنگہ :بہار سرکار کی ترجیحات میں سے ایک رائٹ ٹو ایجوکیشن ہے ۔ اس کے توسط سے بچوں تک آسان طریقہ سے تعلیم فراہم کرناہے لیکن انتظامی کی سخت لاپرواہی اور نظر انداز کئے جانے کی وجہ سے بینی پور بلاک کادیورام امیٹھی پنچایت کو ایک اسکول نہیں مل پارہا ہے جبکہ اس پنچایت کو ایک ہائی اسکول کی بھی ضرورت ہے ۔ حالانکہ اسکول نہ رہنے وکی وجہ سے طالبات کو دور کے اسکول میں جا کر پڑھنا پڑتا ہے اور لڑکیاں سنسان راستوں سے گذرتی ہیں جس کی وجہ سے کبھی بھی کسی طرح کا حادثہ پیش آجانے کا خدشہ بنا رہتاہے ۔ دیورام امیٹھی پنچایت کے چھ گاؤں میں نو منظور اسکول کھولنے کیلئے آر جے ڈی کے سینئر لیڈر اور سابق وزیر عبد الباری صدیقی نے محکمہ تعلیم کے پرنسپل سکریٹری آر کے مہاجن کو خط لکھا ہے ۔ خط میں لکھاہے کہ مکھیاسنجیدہ خاتون کئی بار انتظامیہ کے افسران سے لے کر عوامی نمائندگان تک کو تحریری درخواست دے کر اسکول کھولنے کا مطالبہ کرچکی ہیں لیکن اب تک اس مسئلہ کا کوئی حل نہیں ہوپایا ہے ۔ قرب وجوار میں اسکول نہیں ہونے کی وجہ سے گاؤں کے چھوٹے چھوٹے بچوں کو تعلیم حاصل کرنے میں سخت دشواری کاسامنا کرنا پڑتاہے ۔ سابق مکھیاغیاث الدین اور موجودہ مکھیا سنجیدہ خاتون کئی بار اس جانب وزیر اعلی تک کی توجہ دلا چکی ہے ۔ گذشتہ دنوں عبد الباری صدیقی سے ملاقات کرکے ان سے پہل کروایا ہے اب دیکھنا ہے کہ یہ مطالبہ کب تک پورا ہوپاتا ہے ۔
(رپورٹ:عرفان احمد پیدل )

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close