بہارپٹنہسیاستہندوستان

بی جے پی سے اختلافی مسائل پر جے ڈی یو اپنے سابقہ موقف پر قائم

پٹنہ: 2019 کے عام انتخابات کے سلسلے میں قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) کی اتحادی جماعت جنتادل یونائیٹیڈ (جے ڈی یو) کی قومی مجلس عاملہ کی میٹنگ میں آج مشن 2019 پرگفتگو ہوئی۔ساتھ ہی بی جے پی کے ساتھ اختلافی مسائل پر جے ڈی یو کے سابقہ موقف پر قائم رہنے کی بات دہرائی گئی۔ میٹنگ کے بعد پارٹی کےجنرل سکریٹری کے سی تیاگی نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ قومی مجلس عاملہ کی میٹنگ میں لوک سبھا الیکشن کے لیے لائحہ عمل پر بحث کی گئی اور یہ طے ہوا کہ جلد ہی پارٹی امیدواروں کے انتخاب کا عمل شروع کر دے گی۔ پارٹی نے اس دفعہ لکشدیپ کی ایک سیٹ پر بھی اپنا امیدوارکھڑا کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ انہوں نے یہ بھی واضح کیا کہ دفعہ 370، یکساں سول کوڈ اور متنازعہ رام جنم بھومی۔ بابری مسجد پر پارٹی اپنے پرانے موقف پر آج بھی قائم ہے۔
مسٹر تیاگی نے کہا کہ پارٹی ابھی بھی یہ مانتی ہے کہ رام جنم بھومی۔ بابری مسجد تنازعہ کا حل سپریم کورٹ کے فیصلے یا متعلقہ فریقوں کے درمیان باہمی گفتگو سے ہی نکلے گا۔ انہوں نے کہا کہ ابھی مقدمہ سپریم کورٹ میں چل رہا ہے اور ہر کسی کو سپریم کورٹ کے فیصلے کا انتظار کرنا چاہیے۔ اس تعلق سے عدالت کا جو بھی فیصلہ آئے اس کاہر کسی کو احترام کرنا چاہیے۔
جے ڈی یو کے جنرل سکریٹری نے کہا کہ آسام میں شہریت ترمیمی بل کے مسئلے پر پارٹی اپنا موقف پہلے ہی واضح کر چکی ہے۔ راجیہ سبھا میں پارٹی اس کی مخالفت کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس نے لوک سبھا میں اس بل پر ووٹنگ کے دوران بائی کاٹ کیا تھا جو ایک طرح سے حکومت کی حمایت ہی تھی۔ پارٹی کانگریس کے اس عمل کی مذمت کرتی ہے۔ مسٹر تیاگی نے کہا کہ پارٹی اس معاملے میں آسام کے عوام کے ساتھ ہے اور اس پر ان کی حمایت کے لیے ایک اعلٰیٰ سطحٰ وفد آسام بھیجنے کا فیصلہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس وفدمیں ان کےعلاوہ پارٹی کے نائب صدر پرشانت کشور بھی ہوں گے۔ وفد آسام میں اس مسئلے پر مخالفت کرنے والی تنظیموں اور پارٹی کے لیڈران سے گفتگو کرے گی۔ پارٹی کے قومی صدر اور بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار کی صدارت میں قومی مجلس عاملہ کی میٹنگ میں لوک سبھا الیکشن کے لیے امیدواروں کے انتخاب کے تعلق سے ایک کمیٹی تشکی دی گئی ہے۔ اس کمیٹی میں پارٹی کے قد آور رہنما اور وزیر توانائی وجیندر پرساد یادو، آبی وسائل کے وزیر راجیو رنجن سنگھ عرف للن سنگھ اور پارٹی کے ریاستی صدر اور راجیہ سبھا کے رکن وششٹ نارائن سنگھ شامل ہیں۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close