کھیل

جو ینگ سے مسلسل 11 ویں بار ہاری سائنا

اوڈیسے: دولت مشترکہ کھیل گولڈ فاتح سائنا نہوال دنیا کی نمبر ایک کھلاڑی تائی پے کی تے جو ینگ کے خلاف گزشتہ چار سال سے کامیابی حاصل نہیں کر پانے کا تعطل نہیں توڑ سکیں اور اتوار کو انہیں ڈنمارک اوپن بیڈمنٹن ٹورنامنٹ کے فائنل میں ینگ سے شکست کھاکر چاندی کا تمغہ سے اکتفا کرنا پڑا۔
سائنا کا اس ہار کے ساتھ 2012 کے بعد یہاں دوسری بار چمپئن بننے کا خواب ٹوٹ گیا۔ دنیا کی نمبر ایک کھلاڑی اور ٹاپ سیڈ جو ینگ نے سائنا کو 52 منٹ تک چلے مقابلے میں 21-13 13-21 21-6 سے شکست دے کر خواتین کے سنگلز کا خطاب جیت لیا۔
دنیا کی 10 ویں نمبر کی کھلاڑی سائنا کا اس شکست کے بعد ینگ کے خلاف 5-13 کا کریئر ریکارڈ ہو گیا ہے۔ سائنا نے نومبر 2014 سے اب تک ینگ سے اپنے گزشتہ 11 مقابلے گنوائے ہیں۔ سائنا نے آخری بار ینگ کو مارچ 2013 میں سوئس اوپن میں شکست دی تھی۔ تب سائنا ٹاپ سیڈ تھیں جبکہ ینگ چھٹی سیڈ تھیں۔ لیکن اس کے بعد سے ینگ کا قد مسلسل بلند ہوتا چلا گیا۔ سائنا کو 2018 میں پانچ بار ینگ سے شکست ملی ہے۔
ینگ نے اس سال سائنا کو اس سے پہلے ایشیائی کھیلوں، ایشیائی چمپئن شپ، آل انگلینڈ چمپئن شپ اور انڈونیشیا ماسٹرز میں شکست دی تھی۔
ڈنمارک اوپن کے فائنل میں ینگ نے پہلے گیم میں مسلسل پانچ پوائنٹس لے کر 6-1 کی برتری بنائی اور پھر پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ انہوں نے مسلسل اپنی برتری مضبوط کرتے ہوئے پہلا گیم 21-13 کے فرق سے جیت لیا۔
دوسرے گیم میں سائنا نے حیرت انگیز واپسی کرتے ہوئے 5-2 کی برتری بنائی اور پھر 8-3، 12-5، 18-9 سے آگے رہتے ہوئے 21-13 پر دوسرا گیم ختم کر میچ میں برابری حاصل کر لی۔ دوسرے گیم میں سائنا کے کھیل کو دیکھ کر لگا کہ وہ مسلسل 10 شکست کا تعطل توڑ دیں گی لیکن ینگ کے ارادے کچھ اور ہی تھے۔
فیصلہ کن گیم میں ینگ نے اپنی سروس، انداز اور نیٹ پلے سے سائنا کو جیسے نوآموز ثابت کر دیا۔ انہوں نے مسلسل نو پوائنٹس لے کر 11-2 کی برتری بنانے کے ساتھ ہندستانی کھلاڑی کا حوصلہ ختم کر دیا۔ سائنا فیصلہ کن گیم میں جیسے خود سپردگی کر گئیں اور اس گیم کو 6-21 سے ہار گئیں۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close