بہارپٹنہ

حج کا رکن اعظم وقوف عرفہ مغفرت کی ضمانت ہے: شاہ ہلال احمد

پٹنہ:ریاست بہارسے جانے والے عازمین حج کے اعزاز میں حج بھون ،پٹنہ میں دعائیہ مجلس کے انعقادکاسلسلہ چوتھے دن بھی جاری رہا جس کی صدارت ریاستی حج کمیٹی کے معزز چیئر مین حافظ الحاج محمد الیاس عرف سنو بابونے کی جبکہ نظامت کا فریضہ جناب مولانا ایوب نظامی قاسمی ناظم مدرسہ صوت القرآن داناپور نے انجام دیا۔
مہمان خصوصی حضرت مولاناسید شاہ ہلال احمد قادری، خانقاہ مجیبیہ پھلواری شریف ورکن حج کمیٹی پٹنہ نے سوئے مدینہ روانہ ہونے والے قافلہ سے خطاب کرتے ہوئے فرمایا کہ حاجی اللہ کا مہمان ہوتا ہے حج اصلاً اللہ کی ضیافت کے اہتمام کا نام ہے سیدنا رسول اکرم ﷺ نے ارشاد فرمایا حاجی رحمٰن کے مہمان ہیں میزبان اگر مہربان ہوتو وہ اپنی شان کے مطابق میزبانی کرتا ہے۔ اسلئے آپ اس کریم میزبان کی بارگاہ میں تشریف لے جارہے ہیں جہاں آپ کا کریم میزبان آپ کی دعاء کو قبول فرماتا ہے۔ حج کا اہم ترین رکن اعظم وقوف عرفہ ہے وہاں بہت زیادہ کام نہیں کرنا ہے تھوڑے وقت کیلئے بھی اگر حاجی وہاں ٹہر گیا تو وہ بخشا بخشایا ہوا ہوجا تا ہے یہ کرم کی ضیافت نہیں ہے تو اور کیا ہے۔ اگر اس رکن اعظم کی ادائیگی میں چپ چاپ خاموش بھی رہے تو وہ رحمٰن جس کے آپ مہمان ہیں وہ ضرور نوازتا ہے۔ حج اصل میں رحمٰن کے دربار میں ضیافت ہے اگر ہمارے سرمایے لگتے ہیں اور پوری جدوجہد ،مشقت کرنے کے بعد اس رحمٰن کی ضیافت مل جائے تو یہ سستاسودا ہے اور قابل رشک بھی۔آپ کی کوئی بھی نماز حرم مکہ اور حرم مدینہ میں جماعت سے چھوٹنے نہ پائے پوری ہمت کے ساتھ آپ حج کے اعمال کو مکمل کریں گے۔ سب سے زیادہ مقبول حاجی وہ ہے جو سب سے زیادہ میلا، کچیلا، دیوانہ بن کر اللہ کی عبادت میں لگا رہے۔
اس موقع سے حضرت مولانا محمد عالم قاسمی ، امام وخطیب جامع مسجد دریاپور،پٹنہ نے فرمایا کہ حاجی جب حج وعمرہ کی نیت کرتا ہے تو اس نیت میں دو بنیادی چیزوں کا ذکر کرتا ہے پہلی چیز یہ ہیکہ وہ یہ دعاء مانگتا ہے کہ اللہ ہمیں ہر قدم پر ہمارے حج وعمرہ کو آسان کردے اور یہ آسانی خودسپردگی سے حاصل ہوتی ہے دوسری چیز جو حاجی مانگتاہے وہ یہ ہے کہ وہ اللہ سے حج کی قبولیت کی دعاء مانگتا ہے۔ یعنی وہ حج مقبول کی دعاء مانگتا ہے اور حج مقبول کے لئے شرط یہ ہے کہ حاجی اپنی نیت کو پاک وصاف کرلے اور صرف اللہ کی رضاجوئی کے لئے ہی سفر حج کرے عام طور پر انسان ہر سفر کیلئے کچھ نہ کچھ تیاری کرتاہے مگر حج کے سفر کے لئے کچھ خاص قسم کی تیاری ہوتی ہے وہ تیاری تقویٰ والی تیاری ہے۔انہوں عازمین وعازمات سے فرمایا کہ آپ کا اصل توشہ تقویٰ ہی ہے وہاں آپ کو دو طرح کی دنیا ملے گی ایک لگزری دنیا جو حرم سے باہر ہے اور ایک روحانی دنیا جو حرم کے اندر ہے آپ اپنے ایمان کی حفاظت کے لئے اندر والی دنیا میں لگائے رکھیں اس لئے کہ عبادت کے ذریعہ اللہ سے بندے کا رشتہ مضبوط ہو تاہے۔ اور حج میں یہ استحکام اپنے تکمیل کو پہونچتا ہے آپ ذرا سونچئے دوبارہ حج کا موقع ملے نہ ملے اپنے حج کومکمل کرکے اپنے آپ کو اللہ کا نمائندہ بن کر لوٹیں تاکہ آپ کا حج حج مقبول بن جائے اور مقبول حج کی علامت یہ ہے کہ حاجی کی زندگی میں نمایاںتبدیلی ہوجائے۔
دعائیہ مجلس کا آغاز قاری محمد مجیب الرحمن معاون قاضی دارالقضا ء امارت شرعیہ پھلواری شریف کی تلاوت قرآن کریم اور نعتیہ کلام سے ہواجبکہ حضرت شاہ صاحب کی رقت آمیز دعاء پر مجلس کا اختتام ہوا۔
میڈیا انچارج صغیر احمد نے بتایا کہ آج گیا ائیر پورٹ سے مدینہ کے لئے روانہ ہونے والی آج کی فلائٹ سے جانے والے عازمین کی کل تعداد149ہے ۔ واضح رہے کہ عازمین و عازمات کی بسیں صبح آٹھ بجے حج بھون کے احاطے سے گیا ایئر پورٹ کیلئے روانہ ہوگی۔ مجلس میںجن سرکردہ شخصیات نے شرکت کی ان میں مفتی سہراب عالم ندوی ، نائب ناظم امارت شرعیہ، مولانا محمد شبلی قاسمی، نائب ناظم امارت شرعیہ، مفتی قمر نسیم قاسمی ،رکن حج کمیٹی ،مولانا احسان قاسمی پالی گنج کے علاوہ شہر کے دانشوران اور بڑی تعداد میں اہل ایمان نے شرکت کی ۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close