دہلیسیاستہندوستان

حکومت فسادات کے متاثرین کو انصاف دلائے گا:مودی

نئی دہلی:وزیراعظم نریندر مودی نے 1984 کے سکھ مخالف فسادات کو سکھوں کے ساتھ ناانصافی قرار دیتے ہوئے آج کہا کہ انصاف کا ساتھ دینے کے گرونانک اور گرو گوبند سنگھ کے دکھائے ہوئے راستے پر چلتے ہوئے قومی جمہوری اتحاد حکومت 1984 کے فسادات کے متاثرین کو انصاف دلانے کے لئے کوشاں ہے۔گروگوبند سنگھ کی سالگرہ تقریبات کے موقع پر قومی دارالحکومت میں 350 روپے کا یادگاری سکہ جاری کرنے کے بعد اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے وزیراعظم نے 1984 کے سکھ فسادات کا ذکر کیا اور کہا کہ تمام سکھ گروؤں نے خواہ وہ گروگوبند سنگھ ہو یا گرونانک جی انصاف کے ساتھ کھڑے رہنے کا راستہ دکھایا ہے اور اسی راستے پر چلتے ہوئے موجودہ حکومت فسادات سے متاثر افراد کو انصاف دلانے کے لئے کام کررہی ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ قانون اب ان ماؤں، بہنوں، بیٹوں اور بیٹیوں کی آنکھوں سے آنسو پونچھنے کا کام کرے گا جنہوں نے کئی دہائیوں تک مشکلات کا سامنا کیا ہے اور انہیں انصاف دلایا جائے گا۔ یہاں ایک تقریب میں جس میں سابق وزیراعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ اور متعدد مرکزی وزرا موجود تھے ، مسٹر مودی نے کہا کہ اس مرکزی حکومت کرتار پور کوریڈور تعمیر کرنے جارہی ہے جس سے گردوارہ دربار صاحب جانے میں سکھ بھائی بہنوں کو بڑی مدد ملے گی۔وزیراعظم نے کہا کہ مرکزی حکومت کی انتھک کوششوں کے نتیجے میں کرتارپور کوریڈور کی تعمیر ہونے جارہی ہے اور اب ہر ہندوستانی دوربین کےبجائے گردوارہ دربار سنگھ جاکر اپنی آنکھوں سے اس کا دیدار کرسکے گا۔مسٹر مودی نے کہا کہ یہ اگست 1947 میں کی گئی غلطیوں کی تلافی ہے۔ واضح طور پر ان کا اشارہ اس وقت کے کانگریسی رہنماؤںکی طرف تھا جنہوںنے مبینہ طور پر کرتار پور کی ہندوستان میں شمولیت کو یقینی بنانے کی کوشش نہیں کی تھی۔دسویں گرو کی سماجی خدمات کی تعریف کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ گروگوبند سنگھ ہمت، صبر، بہادری اور قربانی کی حیرت انگیز مثال تھے۔اس تقریب کا اہتمام وزیراعظم کی سرکاری رہائش سات، لوک کلیان مارگ پر کیا گیا تھا۔ وزیراعظم نے اس موقع پر ملک کے عوام کو لوہری کی مبارک باد دی۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close