سیاستہندوستان

رفائیل معاملہ مودی کو دوبارہ اقتدار میں لائے گا: نرملاسیتارمن

نئی دہلی:وزیر دفاع نرملا سیتا رمن نے الزام لگایا ہے کہ کانگریس نے رفائیل سودے کے بہانے نہ صرف انہیں بلکہ وزیر اعظم نریندر مودی کے خلاف بھی نازیبا الفاظ کا استعمال کرکے ان کی توہین کی ہے اور اس پر معافی مانگنے کے بجائے پارلیمنٹ اور ملک کو گمراہ کیاجارہا ہے۔محترمہ سیتارمن نے لوک سبھا میں رفائیل معاملے پر دو دن تک چلنے والی بحث کا جواب دیتے ہوئے آج کہا کہ اس طیارہ سودے میں کسی طرح کی گڑبڑی نہیں ہوئی اور کانگریس سیاسی فائدے کے لئے جھوٹ کی بنیاد پر غلط طریقے سے الزام لگاکر ان کا پروپیگنڈہ کررہی ہے۔انہوں نے کہا کہ رفائیل معاملہ کو بلاوجہ طول دینے اور اس پر وزیر اعظم اور وزیر دفاع کو نازیبا الفاظ کہنے والی کانگریس کو سمجھ لینا چاہئے کہ یہ معاملہ اسے مہنگا پڑنے والا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بوفورس معاملے نے کانگریس کو اقتدار سے باہر کیا تھا لیکن رفائیل قومی مفاد میں کیا گیا فیصلہ ہے اس لئے یہ وزیر اعظم نریندر مودی کو اقتدار میں واپس لائے گا۔ وزیر دفاع نے یہ بھی الزام لگایا کہ کانگریس کی قیادت والی یو پی اے حکومت رفائیل خریدنے کے حق میں ہی نہیں تھی اسی لئے اس وقت کے وزیر دفاع نے پارلیمنٹ ہاوس کے احاطے میں چھ فروری 2014 کو صحافیوں سے کہا تھا کہ طیاروں کے لئے پیسہ کہاں سے آئے گا۔ یہی وجہ ہے کہ کارگل جنگ کے بعد جن رفائیل جیسے طیاروں کی ضرورت محسوس کی جارہی تھی اس پر کانگریس حکومت نے کوئی ٹھوس فیصلہ نہیں لیا۔
وزیر دفاع نے رفائیل طیاروں کی خریداری کے لئے کسی طرح کے طریقہ کار کو نہیں اپنانے اور وزیر اعظم پرصلاح و مشورہ کے بغیر سودا طے کرنے کے الزام کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ ان طیاروں کی خریداری کو حتمی شکل دینے سے پہلے اس معاملے پر 74میٹنگیں ہوئی ہیں اور 2015 اور 2016کے دوران اس خریداری سے متعلق طریقہ کار پر مسلسل میٹنگو ں کا دور چلتا رہا ہے۔ انہوں نے خریداری میں جلد بازی کے کانگریس کے الزامات کو مسترد کیا اور کہا کہ وہ ہر معاملے پر صرف سیاست کرتی ہے اور ملک کی سلامتی سے اسے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔طیاروں کی قیمت کے سلسلے میں کانگریس کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے وزیر دفاع نے کہا کہ اس کے لیڈر یو پی اے کے وقت طیاروں کی قیمت کی تجویز 520 کروڑ روپے ہونے کا دعوی کررہے ہیں لیکن اس کا ذکر کسی دستاویز میں نہیں کیا گیا ہے ۔ بھگوان جانے کانگریس لیڈروں کو یہ اعدادو شمار کہا ں سے ملا ہے۔کانگریس قیادت پر رفائیل طیارہ کی قیمتوں کے سلسلے میں پوری طرح ہوم ورک نہیں کرنے کا الزام لگاتے ہوئے وزیر دفاع نے کہا کہ اس معاملے پر کانگریس کے لیڈر گمراہ ہیں۔ کانگریس رہنما جتنی مرتبہ یہ معاملہ اٹھارہے ہیں اتنی مرتبہ اس کی قیمت تبدیل ہورہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ 29جنوری کو جن آکروش ریلی میں اس طیارہ کی قیمت سات سو کروڑ روپے بتائی گئی ۔ پھر 28جولائی کو ان کی قیمت 520کروڑ روپے بتائی گئی۔ چھتیس گڑھ کے رائے پور میں ایک انتخابی ریلی کے دوران ان طیاروں کی قیمت 540کروڑ روپے بتائی گئی ۔ اور پھر حیدرآباد میں ان کی قیمت کچھ اور بتائی گئی۔
انہوں نے رفائیل سودے کو ملک کے مفاد میں لیا گیا مودی حکومت کا اہم فیصلہ بتایا اور کہا کہ قومی سلامتی سے متعلق اس معاملے پر سیاست نہیں ہونی چاہئے ۔ مودی حکومت کا یہ فیصلہ پڑوسی ملکوں کی اسٹریٹیجک سرگرمیوں کے مدنظر ضروری تھا۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close