کھیل

رونالڈو نے کہا رضامندی سے قائم کئے تھے جسمانی تعلق، عصمت دری نہیں کی

نئی دہلی:فٹ بال کے عالمی شہرت یافتہ کھلاڑی پرتگال کے کرسٹیانو رونالڈو نے لاس ویگاس ہوٹل میں سال2009 میں ایک خاتون کے ساتھ جسمانی تعلق کا اعتراف کیا ہے تاہم صفائی دیتے ہوئے کہا کہ انہوں نے خاتون کی عصمت دری نہیں کی بلکہ یہ سب کچھ باہمی رضامندی سے ہوا تھا۔
رونالڈو ان دنوں عصمت دری کے الزامات کا سامنا کررہے ہیں جس کی وجہ سے دنیا بھر میں ان کے امیج کو کافی نقصان پہونچا ہے۔ حالانکہ رونالڈو کے وکیل پیٹر کرسٹیانسین نے کہا کہ جووینٹس اسٹار کو اس معاملے پر اپنی خاموشی توڑنے کے لئے مجبور کیا گیا ہے۔
پیٹر نے رونالڈ و کے معاملے کو دیکھنے والی کمپنی جیسٹی فیوٹ کے ذریعہ جاری بیان میں کہا’’ ایک بار پھر ہم کسی طرح کی غلط فہمی کو دور کرتے ہوئے بتانا چاہتے ہیں کہ سال2009میں لاس ویگاس کے ایک ہوٹل میں کرسٹیانو رونالڈو نے جو بھی کیا وہ پوری طرح دونوں فریق کی رضامندی سے تھا۔‘‘
لاس ویگاس کی پولیس نے گذشتہ ہفتہ اس بات کا اعلان کیا تھا کہ وہ سابق ماڈل کیتھرین میوگرا کے سال2009کے واقعہ کے سلسلے میں جانچ دوبارہ شروع کررہے ہیں۔ اس خاتون نے رونالڈو پر عصمت دری کا الزام لگایا ہے۔ حالانکہ رونالڈو نے واضح طورپر عصمت دری کے الزامات سے انکار کیا ہے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close