ہندوستان

سنیماتھک مانو کا ایرانی فلموں کی نمائش کے ساتھ افتتاح

فارسی، اردو زبان کا لباس:ڈاکٹر اسلم پرویز

حیدرآباد:مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی، انسٹرکشنل میڈیا سنٹر نے آج اپنے فلم کلب ”سنیماتھک مانو“ کا آغاز ایرانی فلم فیسٹول کے ساتھ کیا۔ ڈاکٹر محمد اسلم پرویز، وائس چانسلر نے سنیماتھک مانو کا افتتاح کرتے ہوئے کہا کہ فارسی اردو زبان کا لباس ہے۔ انہوں نے فلم کلب کے افتتاح کے لیے ایرانی فلموں کے انتخاب کی ستائش کی۔ سنیماتھک مانو کا مقصد یونیورسٹی طلبہ کی ہمہ جہت ترقی کو یقینی بنانا ہے۔ میڈیا سنٹر نے ایران کلچر ہاﺅس، نئی دہلی کے تعاون سے اس چار روزہ فیسٹول کا اہتمام کیا ہے۔ اس موقع پر وائس چانسلر نے میڈیا سنٹر کی کارکردگی کی ستائش بھی کی۔
جناب علی اصغر، اول قونصل، قونصل خانہ ایران، حیدآباد نے بحیثیت مہمانِ خصوصی شرکت کرتے ہوئے فلم فیسٹول کو ہند- ایران روایتی ثقافتی تعلقات کے استحکام کی سمت میں ایک قدم قرار دیا۔ جناب محسن عاشوری، کلچرل اتاشی، مہمانِ اعزازی تھے۔ انہوں نے ایرانی فلموں کا جائزہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ ان میں سماجی اصلاح کا موضوع ہوتا ہے۔ عالمی سطح پر ایرانی فلموں کی مقبولیت کی یہی وجہ ہے۔
جناب رضوان احمد، ڈائرکٹر میڈیا سنٹر نے اپنے خیر مقدمی خطاب میں یونیورسٹی کیمپس میں سنیما پر تعلیمی مباحث کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے سنیماتھک مانو کے آغاز کو اردو یونیورسٹی کی تاریخ میں ایک اہم قدم قرار دیا۔ سی پی ڈی یو ایم ٹی آڈیٹوریم میں منعقدہ افتتاحی تقریب کے فوری بعد ممتاز ایرانی فلم ساز رضا میر کریمی کی فلم ’اے کیوب آف شوگر‘ کی نمائش کی گئی۔ جناب امتیاز عالم، ریسرچ آفیسر نے کارروائی چلائی۔جناب عمر اعظمی، پروڈیوسر نے شکریہ ادا کیا۔ بڑی تعداد میں شعبہ¿ فارسی اور دیگر شعبوں کے اساتذہ اور طلبہ موجود تھے۔ فلم فیسٹول 3 نومبر کو ختم ہوگا۔ فیسٹول میں جملہ 11 فلموں کی نمائش ہوگی۔
قبل ازیں ڈاکٹر محمد اسلم پرویز نے میڈیا سنٹر کے احاطے میں مشہور ایرانی آرٹسٹ محمود فرشیان کی پینٹنگس اور دیگر دستکاری مصنوعات پر مشتمل نمائش کا افتتاح کیا۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close