سیاست

سوئس بینک میں جمع تمام دولت کالا دھن نہیں: مرکزی وزیرارون جیٹلی نے کیا خبردار

نئی دہلی: مرکزی وزیرارون جیٹلی نے آج کہا کہ یہ اندازہ لگانا غلط ہے کہ سوئس بینک میں جمع کردہ تمام پیسے کالا دھن ہیں۔ سوئس بینک میں ہندوستانیوں کی طرف سے جمع رقم میں سال 2017 میں 50 فیصد کا اضافہ ہونے اوراس کے 7 ہزارکروڑ روپے پر پہنچ جانے کے بارے میں اپوزیشن جماعتیں حکومت پر کالے دھن کے سلسلے میں ہو نے والے حملے کے درمیان جیٹلی نے ایک بلاگ میں اپوزیشن جماعتوں پر سخت تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ سب غلط معلومات پر مبنی مہم چلاتے ہیں۔

انہوں نے کہا ’’یہ اندازہ لگانا کہ تمام جمع رقم ٹیکس چوری کی ہے اور سوئٹزرلینڈ میں صرف غیر قانونی رقم جمع ہوتی ہے ایسا ایک دہائی پہلے ہوتا تھا اوراب اس طرح کا اندازہ لگانا غلط ہے۔

انہوں نے خبردار کرتے ہوئے کہا کہ اگلے سال جنوری سے سوئٹزرلینڈ ریئل ٹائم پراکاؤنٹ کے بارے میں معلومات کا اشتراک کرے گا اور اس کے بعد سوئس بینک میں غیر قانونی طریقے سےرقم جمع کرنے والے ہندوستانیوں کے خلاف کالا دھن قانون کے تحت کارروائی کی جائے گی۔

ارون جیٹلی نے کہا کہ سوئس بینک میں ہندوستانیوں کی طرف سے جمع رقم میں اضافہ کے اشارے والی ایک خبرآئی ہے۔ اس کی وجہ سے کچھ طبقوں نےغلط معلومات کی بنیاد پر ردعمل ظاہرکیا ہے، جس نے یہ سوال اٹھایا ہے کہ حکومت کے بدعنوانی کے خلاف اقدامات کے نتیجے کیا ہوئے۔

انہوں نے کہا ہے کہ سوئٹزرلینڈ مالیاتی معلومات کا اشتراک کرنے کے خلاف ہے۔ بہت زیادہ بین الاقوامی دباؤ کی وجہ سے وہ معلومات کا اشتراک کرنے پر متفق ہوا۔ اس کے پیش نظروہ بہت سے ممالک کے ساتھ معلومات کا اشتراک کرنے کے لئے دو طرفہ معاہدہ کیا ہے۔ اس کے لئے، اس نے اپنے قوانین میں ترمیم کی ہے اورہندوستان کے ساتھ ایک معاہدہ کیا ہے جس کے تحت انہوں نے جنوری 2019 سے ہندوستانیوں کی طرف سے فنڈز جمع کرنے کے بارے میں رئیل ٹائم پرمعلومات کا اشتراک کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ کسی بھی غیر قانونی طور پر جمع کرنے والے کو یہ پتہ ہونا چاہئے کہ چند ماہ کے بعد اس کا نام عام ہو گا اوراس کے خلاف کالادھن قانون کے تحت سخت کارروائی کی جائے گی۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close