بہارپٹنہ

سیٹ تقسیم کے معاملے پر بات آگے نہیں بڑھنے پر این ڈی اے کو نقصان ہو سکتا ہے:چراغ

پٹنہ: لوک سبھا انتخابات کے پیش نظر بہار این ڈی اے میں سیٹ تقسیم کو لے کر تنازعہ تھمتا نظر نہیں آرہاہے۔حال ہی میں رالوسپا سپریمو اوپیندر کشواہا کے اس مسئلے پر این ڈی اے سے الگ ہونے کے بعد اب ایل جے پی نے اس معاملے پر اپنی ناراضگی ظاہر کی ہے۔ ایل جے پی رہنما چراغ پاسوان نے اپنے ٹویٹ میں این ڈی اے کو جھٹکا دینے کا اشارہ دیتے ہوئے کہا کہ سیٹ تقسیم کے معاملے پر بات آگے نہیں بڑھنے پر این ڈی اے کو نقصان ہو سکتا ہے۔این ڈی اے میں شامل اہم اتحادی پارٹی ایل جے پی کے لیڈر چراغ پاسوان نے اپنے پہلے ٹویٹ میں لکھا ہے، اتحاد کی نشستوں کو لے کر کئی بار بھارتیہ جنتا پارٹی کے لیڈروں سے ملاقات ہوئی، لیکن ابھی تک کچھ ٹھوس بات آگے نہیں بڑھ پائی ہے۔ اس موضوع پر وقت رہتے بات نہیں بنی تو اس سے نقصان بھی ہو سکتا ہے۔چراغ پاسوان نے اپنے ایک دوسرے میں ٹویٹ میں لکھا، ‘ٹی ڈی پی اور آرایل ایس پی کے این ڈی اے اتحاد سے جانے کے بعد یہ اتحاد نازک موڑ سے گزر رہا ہے۔ ایسے وقت میں بی جے پی اتحاد میں فی الحال باقی ساتھیوں کے خدشات کو وقت رہتے باعزت طریقے سے دور کریں۔ ‘غور طلب ہے کہ 2014 کے لوک سبھا انتخابات بہار میں بی جے پی، ایل جے پی اور رالوسپا مل کر الیکشن لڑے تھے۔ ایل جے پی کو کل سات سیٹوں پر انتخاب لڑی تھی اور چھ پر اس کوکامیابی ملی تھی۔ وہیں رالوسپا تین پر الیکشن لڑی تھی اور تمام سیٹیں جیتنے میں کامیاب رہی تھی۔ اس بار سیٹوں کی تقسیم پر ناراض چل رہے اوپیندر کشواہا نے این ڈی اے کا ساتھ چھوڑ دیا ہے۔ ایسے میں اگر ایل جے پی بھی این ڈی اے کا ساتھ چھوڑتی ہے تو بی جے پی کی مشکلیں اور بڑھ سکتی ہیں۔ اس سے پہلے 10 دسمبر کو مرکزی کابینہ سے استعفیٰ دینے کے بعد اوپیندر کشواہا نے پی ایم نریندر مودی کے ساتھ ہی بہار کے وزیر اعلی نتیش کمار پر جم کر نشانہ لگایا تھا۔ کشواہا نے الزام لگایا کہ مرکز کی این ڈی اے حکومت سے بہار کو جو آس تھی وہ پوری نہیں ہوئی۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close