اتر پردیش

مرکز اور ریاست کی بی جے پی حکومت رام مندر کے لئے عہد بند :موریہ

لکھنو: اترپردیش کے نائب وزیراعلی کیشو پرساد موریہ نے اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر میں تاخیر کے لئے کانگریس کو زمہ دار ٹھہراتے ہوئے کہاکہ راجیہ سبھا میں اکثریت حاصل ہونے پربھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) حکومت مندر کی تعمیر کی راہ ہموار کرسکتی ہے۔مسٹر موریہ نے پیر کو یو این آئی سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ رام مندر معاملہ سپریم کورٹ میں زیرالتوا ہے اور امید ہے کہ جلد ہی یہ تنازعہ حل ہوجائے گا۔ انہوں نے کہاکہ کانگریس اپنے سیاسی فائدے کے لئے مندر کی تعمیر میں رکاوٹ ڈال رہی ہے۔ بی جے پی کے پاس راجیہ سبھا میں اکثریت ہوتی تو مندر کی تعمیرکا راستہ ہموار کرسکتی تھی۔نائب وزیراعلی نے کہاکہ مرکز اور ریاست کی بی جے پی حکومت رام مندر کے لئے عہد بند ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ رام مندر کی تعمیر تین طریقہ سے ممکن ہے ۔ پہلا سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے کے بعد ، دوسرا دونوں فریق کے سمجھوتہ سے یا پھر پارلیمنٹ میں قانون بناکر ۔ انہوں نے کہاکہ سنتوں اور ملک کے عوام کا دباو ہے کہ دوارکا مندر کی طرح ہی اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے قانون بنایا جائے لیکن قومی جمہوری اتحاد حکومت کے پاس راجیہ سبھا میں اکثریت نہیں ہے۔ بغیر اکثریت کے اس طرح کے قانون کو پاس نہیں کرایا جاسکتا ۔مسٹر موریہ نے کہاکہ کانگریس دہرا کھیل کھیل رہی ہے۔ رام مندر کے لئے رکاوٹ ڈال رہی ہے۔ سپریم کورٹ میں ہر بار سماعت کے دوران نئے نئے امور کو سامنے رکھ کر فیصلہ آنے میں تاخیر کرا رہی ہے۔انہوں نے کہاکہ ملک کے کروڑوں لوگ اجودھیا میں رام مندر دیکھنا چاہتے ہیں ۔ ہمارے لئے بھی یہ عقیدت کا معاملہ ہے۔ انہوں نے کہاکہ فی الحال ابھی معاملہ سپریم کورٹ میں زیرالتوا ہے۔ امید ہے کہ رام مندر تنازعہ جلد حل ہوجائے گا اور اجودھیا میں بھگوران شری رام مندر کی تعمیر کا راستہ ہموار ہوگا۔انہوں نے کہا کہ کانگریس ایک طبقہ کو خوش کرنے کیلئے رام مندر کے معاملہ پر سیاسی فائدہ اٹھانے میں دلچسپی رکھتی ہے۔ ان سے جب پوچھا گیا کہ کیا حکومت پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس میں رام مندر بل لاسکتی ہے ، وزیراعلی نے کہاکہ حکومت رام مندر کے لئے جو بھی ضروری ہوگا کرے گی، لیکن اس کے لئے قانون کے دائرے میں رہ کر ہی کوئی کام کرے گی۔
مسٹر موریہ نے کہاکہ ایس ایس سی ۔ایس ٹی ایکٹ اور او بی سی ترمیمی بل پر دوسری جماعتوں کی حمایت مل گئی لیکن رام مندر پر ملنا کافی مشکل ہے۔پسماندہ کمیشن کو آئینی درجہ دلانے کے لئے انہوں نے نریندر مودی حکومت کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ مرکز میں این ڈی اے حکومت نے کئی فلاح و بہبود کی اسکیمیں چلائی ہیں جن کا فائدہ عوام کو مل رہا ہے۔نائب وزیراعلی نے سابق وزیراعظم اٹل بہاری واجپئی کے انتقال پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ مسٹر واجپئی کی موت سے جو خلا پیدا ہوا ہے اسے پر نہیں کیا جاسکتا۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close