ہندوستان

مرکز پنجاب کو سکھ فسادات کے متاثرین کے لئے 2 کروڑ روپے دے گا

نئی دہلی: مرکزی حکومت نے 1984 کے سکھ فسادات کے بعد بے گھر خاندانوں کی بازآبادکاری پیکج کے تحت پنجاب حکومت کو دو کروڑ آٹھ لاکھ روپے کی رقم کی ادائیگی کی منظوری دے دی ہے۔مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے پنجاب حکومت کی درخواست پر بازآبادکاری پیکیج کی ادائیگی کی مدت گزر جانے کے بعد اس میں رعایت کرتے ہوئے اس رقم کی ادا ئیگی کرنے کی جمعرات کو منظوری دے دی۔وزارت کے ایک افسر نے بتایا کہ فساد متاثرین کی شکایات کی سماعت کے لئے قائم جسٹس جی پی ماتھر کمیٹی نے اپنی رپورٹ میں کہا تھا کہ 2006 کی بازآبادکاری پیکیج منصوبہ کے تحت 1020 معاملات میں متاثرین کو ادائیگی نہیں کی گئی اور منصوبہ بند ہو گیا۔ کمیٹی نے سفارش کی تھی کہ ہر خاندان کو دو لاکھ روپے ادا کرنے والے اس منصوبہ کو مقررہ وقت کے لئے دوبارہ شروع کیا جائے اور پنجاب حکومت سے اس مدت میں لوگوں کی شناخت کرکے انہیں رقم دینے کو کہا جائے۔کمیٹی کی سفارش کی بنیاد پر وزارت داخلہ نے نو مئی 2016 کو پنجاب حکومت کو خط لکھ کر تین ماہ میں متاثرین کی شناخت اور اگلے تین ماہ میں یعنی آٹھ نومبر 2016 تک انہیں رقم ادا کرنے کو کہا۔ مرکز نے کہا تھا کہ وہ اس رقم کو ادا کرے گا۔ پنجاب حکومت نے اس مدت میں مرکز کو کوئی اطلاع نہیں دی لیکن گذشتہ 31 اگست کو اس نے ایک خط لکھ کر وزارت داخلہ کو مطلع کیا کہ اس نے 104 متاثرین کی شناخت کرکے انہیں دو کروڑ آٹھ لاکھ روپے کی رقم ادا کی ہے ۔پنجاب حکومت کی درخواست پر مسٹر سنگھ نے ادائیگی کی مدت میں ایک بار کی رعایت دیتے ہوئے پنجاب کو دو کروڑ آٹھ لاکھ روپے کی رقم دینے کی منظوری دے دی ہے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close