بہارمتھلانچل

مسلمانو ںمیں اتحاد پیدا کرنا امارت شرعیہ کی پہلی کوشش :شبلی قاسمی

دربھنگہ میں امارت شرعیہ کا تاسیسی اجلاس ،علماء و دانشوران کا خطاب

دربھنگہ: امارت شرعیہ مکمل نظام شریعت ہے ۔ شعبہ تبلیغ، شعبہ تنظیم، شعبہ دار القضا، شعبہ دار الافتا، شعبہ تعلیم، شعبہ بیت المال اور شعبہ تحفظ المسلمین ان تمام شعبوں میں امارت نے نمایاں کام کئے ہیں۔اس کے علاوہ مسلمانوں کو کلمہ واحدہ کی بنیاد پر متحد کرنا اورانہیں شریعت کا پابند بنانے کی کوشش کرنا اس کی پہلی کوشش رہی ہے ۔مذکورہ باتیں مولانا شبلی قاسمی نے دار القضا امارت شرعیہ دربھنگہ کے زیر اہتمام اتوار کو محلہ شیر محمد بھیگو واقع اینجل ہائی اسکول کے کانفرنس ہال میں منعقد اجلاس عام سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ امارت کے بانی مولانا ابو المحاسن محمد سجاد ؒ کے اخلاص کی برکت ہے کہ ادارہ ترقی کی راہ پر گامزن ہے۔ اللہ نے امارت شرعیہ کو جتنے افرا دیئے وہ سب کے سب اپنے وقت بہترین قائدتھے۔ موجودہ امیر شریعت مفکر اسلام مولانا سید ولی رحمانی بھی مرد آہن اور ملک کے بہترین قائد ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مجھے قاضی مجاہد الاسلام ؒ کے ایک جملہ نے امارت کا معتقد بنادیا۔ وہ کہا کرتے تھے کہ امارت شرعیہ میرے دین و ایمان کا حصہ ہے۔ انہوں نے امارت شرعیہ کے پیغام وحدت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ امارت نے ہمیشہ مسلکی اختلافات کو ختم کرنے کے لیے کوششیں کی ہیں ۔ امارت کے کاموں میں حصہ لینے کی ضرورت ہے۔ بالخصوص نئی نسل کو دینی تعلیم اور اخلاقیات سے سنوارنے کے لیے آگے آنے کی ضرورت ہے۔ امارت شرعیہ کے نائب ناظم مولانا شبلی قاسمی کی صدارت اور دار القضا دربھنگہ کے قاضی مولانا ارشد رحمانی کی نظامت میں منعقدپروگرام کا افتتاح محمد شاہد کی تلاوت اور مزمل حیات کے نعت پاک سے ہوا۔اس موقع پر پروفیسر شاکر خلیق نے امارت شرعیہ کی تاریخ پر روشنی ڈالی اور امارت سے اپنے گہرے لگاؤ کا اظہارکیا ۔ انہوں نے کہا کہ امارت شرعیہ نے ہر دور میں انتشار کو ختم کرنے کا کام کیا ہے۔بدیع الزماں نے بھی امارت شرعیہ کے کاموں کی تعریف کی اورنیک خواہشات کااظہار کیا۔ مولانا اعجاز احمد (سابق چیئرمین بہار مدرسہ بورڈ) نے امارت کو متحدہ پلیٹ فارم بتاتے ہوئے سب کو اس سے جڑنے کی دعوت دی۔ مولانا ارشد رحمانی نے حضرت مولانا منت اللہ رحمانی اور قاضی مجاہد الاسلام قاسمی کی خدمات پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ ان دونوں حضرات نے امارت شرعیہ کو پروان چڑھانے کی جو کاوش کی ہے وہ تاریخ کا روشن باب ہے۔ مولانا سید نظام الدین اور دربھنگہ سے تعلق رکھنے والے مولانا عبد الرحمن نے بھی بحیثیت امیر امارت کو بہت آگے بڑھایا۔ مولانا نے یہ بھی کہا کہ ملک کے حالات تشویشناک ضرور ہیں مایوس کن نہیں ہیں۔ اس لیے ہمیں حوصلہ کے ساتھ اپنی شریعت پر عمل کرنا چاہیے اور اپنی عملی زندگی میں قانون شریعت کو اپنانا چاہیے۔ اس موقع پر قاری نسیم اختر قاسمی، مولانا غلام ربانی، عارف حسین مظاہری، نوشاد عالم اشاعتی، ایس ایم جاوید اقبال، اینجل ہائی اسکول کے ڈائرکٹر عمر خان، ایڈووکیٹ ممتاز عالم، ڈاکٹر آصف شاہنواز، ڈاکٹر حبان فاروقی، پروفیسر نسیم، زاہد حسین، شرف عالم تمنے، اقبال حسن رشو، نور الدین زنگی، ہارون رشید راعین، امان اللہ بابر، حافظ لئیق منظر واجدی، حافظ ابو شحمہ، ابوذور غفاری، حافظ عامرِ،احتشام الحق، مصطفی کمال اعظمی، امتیاز عالم، مدثر اور عاکف خورشید وغیرہ بطور خاص موجود تھے۔
سابق وزیر عبد الغفورکے ہاتھوں کھرما میں الشفاء اسپتال کی بنیاد

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close