بہارپٹنہ

مسلکی اختلافات تر ک کرکے متحد ہونے کی ضرورت

مسلم ادھیکار سمیلن میں مسلمانوں کی معاشی تعلیمی سماجی اور سیاسی صورتحال پرمقررین کا اظہار افسوس

پٹنہ:پٹنہ میں آج شاندار مسلم ادھیکار سمیلن کا انعقاد کیاگیا ، جس میں کثیر تعداد میں ریاست کے گوشے گوشے سے سیکڑوں کی تعداد میں مسلم دانشوروں نے شرکت کی۔ اس موقع پر مقررین نے مسلمانوں کی معاشی تعلیمی ، سماجی اور سیاسی حالات پر سیر حاصل گفتگو کرتے ہوئے کلمہ وحدت کی بنیاد پر مسلکی نظریاتی اورذات پات کے اختلاف کو ترک کرکے متحد ہونے کی اپیل کی۔ مقامی اردو بھون کے کانفرنس ہال میں پٹنہ ہائی کورٹ کے سینئر ایڈوکیٹ اورملی وسماجی رہنما انظار الحق کی دعوت پر کثیر تعداد میں ملت اسلامیہ کے دانشوروں نے شرکت کی اور اپنے مسائل رکھے۔ کانفرنس کے روح رواں انظار الحق نے واضح طور پر کہا کہ بہار میں دوکروڑ مسلمانوں کی آبادی ہرشعبہ حیات میں پچھڑ گئی ہے۔ انہیں مین اسٹریم میں لائے بغیر ترقی یافتہ بہار کا خواب شرمندۂ تعبیر نہیں ہوسکتا۔ انہوں نے تمام مسلمانوں کو متحد ہونے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ جب تک کہ آپ بیدار نہیں ہوں گے، آپ کے حقوق سلب ہوتے رہیں گے۔ انہوں نے کہا کہ مسلمان اس وقت دلتوں سے بد تر حالت میں ہے۔ اس لئے انہیں مین اسٹریم میں لانے کے لئے ریزویشن دیاجائے۔ انہوں نے مرکزی حکومت سے مطالبہ کیا کہ ماب لیچنگ پر قابو پانے کے لئے مسلم پرونشن ایٹروسیٹیز ایکٹ فی الفور پارلیامنٹ سے ایکٹ پاس کراکر اسے لاگو کیا جائے تاکہ اس طرح کے واقعات پر قابو پایاجاسکے۔
سینئر صحافی اور اقلیتی امور کے ماہر اشرف استھانوی نے کہا کہ ہماری پسماندگی کی وجہ آپسی اختلاف اور انتشار ہے۔ ہماری آبادی بہار میں دوکروڑ ہے، لیکن سرکاری اسکیموں میں ان کی حصہ داری آنٹے میں نمک کے برابر ہے۔ بہار میں اقلیتی کمیشن گذشتہ کئی سالوں سے اپنے سربراہ سے محروم ہے، نتیش وزارت میں ملک کی آزادی کے بعد پہلی بار مسلم فرقہ سے صرف ایک وزیرہے ۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانوں کو اپنے مسائل کے حل کے لئے پنچایت سطح سے لے کر بلاک ضلع اور کمشنری لیول تک اپنا قائد بنانا ہوگا۔ اور اس کی قیادت پر اعتماد کرنا ہوگا۔ اس کے علاوہ حکومت پر مسائل کے حل کے لئے پریشر گروپ بھی بنانا ہوگا۔
اشرف استھانوی نے پروگرام کے روح رواں انظار الحق کی ستائش کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے جمود کو توڑا ہے ان کی آواز پر پوری قوم نے لبیک کہا ہے ۔ انظار الحق نے خلوص دل سے یہ کام کیا ہے۔ مسلمانوں کی بیداری کے لئے ایک شمع روشن کی ہے، ہم تمام لوگوں کا فرض ہے کہ اسے باد مخالف سے محفوظ رکھیں۔
جلسہ سے معروف اسکالر پروفسر محمود نہوسوی نے ملی اتحاد واتفاق پر زوردیتے ہوئے کہا کہ جب تک آپ متحد نہیں ہوں گے۔ آپ کے ساتھ ناانصافیاں حق تلفیاں ہوتی رہیں گی ، صرف رونے دھونے سے کام نہیں چلے گا۔ سر پر کفن باندھ کر ملی کازکے لئے میدان میں آنا ہوگا۔
نیشنل مسلم مائنوریٹی فرنٹ کے صدر سہیل احمد نے کہا کہ بہار میں ہماری آبادی بیس فیصد ہے لیکن آج یہ پوری آبادی بالکل نظرانداز ہے ۔ حکومت وقت میں ان کی کوئی قدرومنزلت نہیں ہے۔ اس لئے ہم لوگوں کو اپنا قائد خود منتخب کرنا ہوگا۔ کفار ومشرکین کی غلامی آپ کب تک کریں گے۔ اپنے اندر قیادت اور سیادت پیدا کیجئے تبھی آپ کے مسائل حل ہوں گے۔
جلسہ سے مظفرپور کی معروف شخصیت ڈاکٹر اقبال محمد سمیع نے جلسہ کے انعقاد کے لئے منتظم کا شکریہ ادا کیا، اور کہا کہ اس طرح کے پروگرام مسلسل ہوتے رہنے چائے تاکہ قوم میں بیداری آئے۔ جلسہ کی صدارت پٹنہ ہائی کورٹ کے سبکدوش جج جسٹس محفوظ عالم نے کیا۔
جسٹس محفوظ عالم نے اپنے صدارتی خطاب میں کہا کہ ہم قرآن اور سنت کے مطابق زندگی گذاریں اورآقائے مدنی کی سیرت پر عمل کریں تو پھر ہم ہی دین ودنیا میں کامیاب وکامران ہوں گے۔ انہوں نے اس شاندار اور کامیاب جلسہ کے انعقاد کے لئے منتظمین کا تہہ دل سے شکریہ ادا کیا۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close