سیاستہندوستان

مظفر پور سانحہ کے خلاف اپوزیشن متحد

آرجے ڈی کی قیادت میں دہلی کے جنتر منتر پر مظاہرہ اور کینڈل مارچ، راہل، کجریوال ،یچوری ، ڈی راجا ،شرد یادو ، دنیش ترویدی اور کنہیا کمار کی شرکت

نئی دہلی:مظفر پور سانحہ کے خلاف پورا اپوزیشن ریاست کی این ڈی اے حکومت کے خلاف متحد ہوگیاہے۔ہفتہ کو نتیش حکومت کے خلاف آر جے ڈی کی قیادت میں جنتر منتر پرزبردست مظاہرے ہوئے۔اس دوران اپوزیشن کے رہنمائوں نے آپسی اتحاداور یکجہتی کا بھی مظاہرہ کیا ۔آرجے ڈی لیڈرتیجسوی یادوکی حمایت میں کانگریس صدر راہل گاندھی ،عام آدمی پارٹی کے کنوینر اور دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال ، لیفٹ لیڈر ڈی راجہ، سیتا رام یچوری، ٹی ایم سی کے دنیش ترویدی، شرد یادو، سنجے سنگھ، جیتن رام مانجھی، کنہیا کمار سمیت اپوزیشن جماعتوں کے کئی لیڈر پہنچے اورخواتین کے تحفظ میں ناکام رہنے پربہارکی این ڈی اے حکومت پرزبردست تنقیدکی۔راہل گاندھی نے اس موقعہ پرنتیش کمارسے مجرموں کے خلاف سخت اورفوری کارروائی کامطالبہ کیاہے ۔جنترمنترپردہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے سیدھے طور پر بہار حکومت اور بی جے پی پر حملہ بولا۔انہوں نے کہا کہ 40بیٹیوں کے ساتھ کئی سالوں سے غلط کام کیا جا رہا تھا۔ان پر غیر انسانی تشدد ہو رہا تھا۔دکھ کی بات یہ ہے کہ بہار حکومت کی نظر میں یہ بات پہلے ہی کئی بار آئی، اس کے باوجود کوئی کارروائی نہیں کی گئی۔ایسے این جی اوکوفنڈزملتے رہے۔اس سے صاف ہے غلط کام کرنے والوں کی پہنچ اوپر تک اور بڑے بڑے لوگوں سے تعلقات ہیں۔کیجریوال نے مطالبہ کیا کہ معاملے کی 3ماہ میں تحقیقات کر قصورواروں کو پھانسی کی سزا دی جائے۔کیجریوال نے کہا کہ جن پارٹیوں کے لیڈر قصورواروں کوبچانے کی کوشش میں لگے ہوئے ہیں، وہ بھی کم مجرم نہیں ہیں۔انہوں نے خبردار کرتے ہوئے کہا کہ ایک نربھیا کے ساتھ غلط کام ہوا تھا، یوپی اے کا سخت ڈول گیا تھا۔حکومت میں بیٹھے لوگوں کو یاد رکھنا چاہئے کہ 40نربھیا کے ساتھ غلط کام ہوا ہے تو عوام 40بار ان کاتخت اکھاڑ کر پھینک سکتی ہے۔انہوں نے الزام لگایا کہ بی جے پی کے لوگ سوشل میڈیا اور سڑکوں پر خواتین کے ساتھ غلط برتاؤکرتے ہیں۔سوشل میڈیا پر صحافیوں کے خلاف بھی غلط باتیں کہی جاتی ہیں۔کجریوال نے کہا کہ بی جے پی کے اندر بھی خواتین محفوظ نہیں ہیں۔کیا ہم ایسا ہی ملک بنانا چاہتے ہیں؟میسابھارتی نے کہاہے کہ اس معاملے میں سی بی آئی پرکوئی بھروسہ نہیں ہے۔ تیجسوی یادو نے بھی اس معاملے میں بہار حکومت پر نشانہ لگایا۔انہوں نے کہا کہ جب چاچاکی انترآتمانہیں جاگی توہم سب دہلی پہونچے ہیں۔کمیشن کی رپورٹ سامنے آنے کے بعد بھی کوئی کارروائی نہیں کی گئی۔جب ٹاٹا انسٹییوٹ کی اطلاع سامنے آئی تب جاکر 2ماہ کے بعدFIRدرج کی گئی۔انہوں نے کہا کہ اس میں بھی اہم ملزم برجیش ٹھاکر کا نام نہیں تھا۔انہوں نے الزام لگایاکہ ملزم برجیش نتیش جی کاقریبی رہا ہے۔انہوں نے مزیدکہاکہ ہم چاہتے ہیں کہ برجیش ٹھاکر کو پھانسی دی جائے۔تیجسوی یادو نے کہا کہ اگر آپ بہار میں جرائم کے اعداد و شمار پر نظر ڈالیں تو گزشتہ ایک سال میں اس میں کافی اضافہ ہواہے۔ریاست میں گینگ ریپ کے معاملے ایک کے بعد ایک کئی اضلاع سے سامنے آ رہے ہیں۔مظاہرے کے بعدمتاثرہ بچیوں کو انصاف دلانے کا مطالبہ کرتے ہوئے ’’کینڈل مارچ‘‘بھی نکالا گیا۔تیجسوی یادونے کہا کہ جس بچی نے یہ مکمل معلومات دی تھیں اسے مدھوبنی کے کسی شیلٹر ہوم میں شفٹ کر دیا گیا ہے۔شفٹ کیے جانے کے بعد اس کے بارے میں کوئی معلومات نہیں ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہم نہیں جانتے کہ وہ زندہ ہے یا اس کا قتل کر دیاگیا یا وہ لاپتہ ہے۔ تیجسوی یادونے عظیم اتحاد پربھی بات کی ہے۔انہوں نے کہا کہ کانگریس سب سے بڑی اپوزیشن پارٹی ہے اورراہل گاندھی کو بڑا کردار اداکرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ تمام سینئر لیڈروں کو ساتھ بیٹھ کر اس پر بات کرنی چاہیے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close