سیاستہندوستان

موب لنچنگ کیلئے بی جے پی براہ راست ذمہ دار:ممتا

کلکتہ،:وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے ترنمول کانگریس کی شہید دیوس ریلی میں ملک بھر میں ہونے والے موب لنچنگ (ہجومی تشدد)کے واقعات پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ پارلیمنٹ میں مرکزی وزیر داخلہ نے ہجومی تشدد کے واقعات پر قابوپانے کی ذمہ داری ریاستوں پر ڈالتے ہوئے کہا ہے کہ مرکزی حکومت اس کیلئے ذمہ دارنہیں ہے۔لیکن کیا بی جے پی اپنے ان لیڈروں کی زبان پر لگام نہیں لگاسکتی ہے جو نفرت کی زبان بول رہے ہیں ۔ممتابنرجی نے کہا کہ مرکزی میں بی جے پی کے اقتدار میں آنے کے بعد سے ہی ملک بھر میں موب لنچنگ کے واقعات شروع ہوئے ہیں ،یہ اس لیے ہوا ہے کہ بھیڑ کو اکسانے والے بی جے پی لیڈران ہیں ، گؤ کے نام پر نفرت پھیلایا گیا اور اس کا نتیجہ ہے کہ صرف افواہ کی بنیاد پر بھیڑ جمع ہوجاتی ہے اور وہ بے قصور افراد پر حملہ کرتے ہیں ۔خیال رہے کہ 21جولائی 1993کو یوتھ کانگریس کی ریلی جس کی قیادت ممتا بنرجی کررہی تھی پر پولس کی فائرنگ میں 13یوتھ کانگریس کارکنان کی موت ہوگئی تھی۔ ممتا بنرجی جب تک کانگریس میں رہی اس وقت تک ہر سال 21جولائی کو شہید دیوس کا اہتمام کرتی تھی ۔مگر ترنمول کانگریس قائم کرنے کے بعدترنمول کانگریس کے بینر تلے اس ریلی کا انعقاد کیا جانے لگا۔اس سال شدید بارش ہونے کے باوجود لاکھوں افراد اس ریلی میں موجود تھے ۔چوں کہ اگلے سال مئی میں پارلیمانی انتخاب ہونے والے ہیں اس لیے بڑی تعداد میں ترنمول کانگریس کے کارکنان موجود تھے۔
ممتا بنرجی نے کہاکہ لنچنگ کے واقعات غیرانسانی اور غیر اخلاقی ہے اور اس پرقابو پانامرکزی حکومت کی ذمہ داری ہے اور وہ ریاستوں کابہانہ بناکر اپنی ذمہ داریوں سے فرار حاصل نہیں کرسکتی ہے ۔انہوں نے بی جے پی کو طالبانی سیاست سے گریز کرنے کی ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ اس سے ملک کمزور ہوگا ۔ممتا بنرجی نے 16جولائی کو وزیر اعظم کی ریلی میں پنڈال گرنے کے واقعے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ جولوگ میگا ریلی کیلئے پنڈال نہیں بناسکے وہ کیا ملک چلائیں گے ۔ممتا بنرجی نے کہا کہ 2019میں بی جے پی کو 100سے بھی کم سیٹیں ملیں گی۔ممتا بنرجی نے اس بات کا عہد کیا کہ وہ بنگال کے تمام طبقات کو ساتھ لے کر چلیں گی اور کسی کے ساتھ بھی مذہب کی بنیاد پر تفریق نہیں کی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ بنگال ہمیشہ سے فرقہ وارانہ ہم آہنگی کا گہوار ہ رہا ہے اور رہے گا اور اس کو توڑنے والے کبھی بھی کامیاب نہیں ہوں گے ۔انہوں نے کہا کہ ترنمول کانگریس تمام مذاہب و طبقات کی سیاسی جماعت ہے۔بی جے پی کی طرح ووٹ کی خاطر نفرت نہیں پھیلاتی ہے اور نہ ہی ایک دوسرے پر حملہ کرنے کیلئے اکساتی ہے ۔ممتا بنرجی نے نوٹ بندی کے حوالے سے کہا کہ اس واقعے کو 20مہینے ہوچکے ہیں مگر اب تک ریزرو بینک آف انڈیا نے صحیح اعداد و شمار پیش نہیں کرسکی ہے کہ 500اور ہزار کے کتنے نوٹ جمع ہوئے ۔انہوں نے کہا کہ ہم نے شروع سے ہی نوٹ بندی کی مخالفت کی تھی اور کہا تھا کہ یہ بی جے پی کا مہا گھوٹالہ ہے اوریہ ثابت ہورہا ہے ۔انہوں نے مرکزی حکومت پر جانچ ایجنسیوں کا غلط استعمال کرنے کا الزام عاید کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی نے ہمیں جانچ ایجنسیوں کے ذریعہ توڑنے کی کوشش کی مگر ہم کمزور نہیں ہوئے ۔ہماری پارٹی کے پارلیمانی پارٹی کے لیڈر سدیب بندو پادھیائے کو گرفتار کیا گیا مگر کیا ہوا وہ جیل سے باہر آچکے ہیں اور ان کے خلاف کوئی ثبوت ہاتھ نہیں لگا ہے ۔خیال رہے کہ شاردا چٹ فنڈ گھوٹالہ کے الزام میں ایک سال سے زاید عرصے تک جیل میں رہنے والے ترنمو ل کانگریس کے راجیہ سبھا کے رکن کنال گھوش جنہوں نے ممتا بنرجی پر شاردا چٹ فنڈ گھوٹالے میں ملوث ہونے کا الزاعاید کیا تھاوہ بھی اسٹیج پر موجود تھے۔پندراگست سے بی جے پی ہٹاؤ دیش بچاؤ مہم کی شروعات کرنے کا اعلان کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے کہا کہ بی جے پی ملک کے سیکولر نظام کو تہس نہس کرنے کی کوشش کررہی ہے۔کسانوں کے مفادات کو نظر انداز کردیا ہے ۔نوجوانوں کیلئے روزگار کے مواقع پیدا کرنے میں بی جے پی مکمل طور پر ناکام رہی ہے ۔انہوں نے کہاکہ ملک بھر میں دلت اور اقلیتوں کے خلاف حملے میں اضافہ ہوا ہے اور انہیں جان بوجھ کر نشانہ بنایا جارہا ہے ۔63سالہ ممتا بنرجی نے کہا کہ بی جے پی ملک کو لوٹ رہی ہے اور بی جے پی کو ہندو شدت پسندوں کے ذریعہ اقلیتوں پر ہونے والے حملے کی ذمہ داری قبول کرنی ہوگی ۔انہوں نے کہا کہ بی جے پی ملک میں طالبانی ہندوازم کو فروغ دینے کیلئے کوشش کررہی ہے جو انتہائی خطرناک ہے۔انہوں نے کہا کہ بی جے پی کو ہندو ازم کا مطلب نہیں معلوم ہے ۔وہ ہندو طالبانی کی پرچارک ہے ۔بی جے پی کی ہندتو سوامی ویکانند ، سوامی رام کرشنا کے ہندو ازم کے مخالف ہے ۔اس لیے ہم بی جے پی کی ہندتو کو تسلیم نہیں کرتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ بی جے پی کی ہندوتومیں تلوار ، تشدد اور ہتھیار ہے اور یہ ہندوازم کے سراسر خلاف ہے ۔بی جے پی ملک کو ہٹلر اور مسولینی کی راہ پر لے جانے کی کوشش کررہی ہے مگر ہم انہیں کامیاب نہیں ہونے دیں گے ۔ممتابنرجی نے کہا کہ مرکزی حکومت عدالتی نظام پر اثر انداز ہونے کی کوشش کررہی ہے ۔اسی طرح دوسرے آئینی اداروں کو کمزور کیا جارہا ہے انہوں نے کہا کہ اس کی وجہ ملک میں آئینی بحران پیدا ہوسکتا ہے ۔پارلیمنٹ میں پیش عدم اعتماد تحریک پر وزیرا علیٰ ممتا بنرجی نے کہا کہ اگراس میں بی جے پی کامیاب ہوگئی ہے مگر بی جے پی اپنے تکبرانہ رویے کی وجہ سے 2014کی حلیف جماعتوں کے اعتماد کو کھودیا ہے اور یہ عدم اعتماد تحریک بھی اسی کا نتیجہ تھا۔انہوں نے کہا کہ ٹی ڈی پی بی جے پی کی حلیف جماعت تھی مگر اس نے ہی عدم اعتماد کی تحریک پیش کیا ۔شیوسینا بی جے پی کی حلیف جماعت ہے مگر وہ بھی بی جے پی کے حق میں ووٹ دینے کے بجائے پارلیمنٹ سے غایب رہی ۔بیجوجنتادل نے بھی ساتھ دینے کے بجائے غائب رہی۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close