سیاستہندوستان

مودی حکومت کا پہلا امتحان آج

نئی دہلی : مرکز کی نریندر مودی حکومت کے خلاف اپوزیشن کی تحریک عدم اعتماد پر جمعہ کو بحث اور ووٹنگ ہوگی۔بی جے پی ، کانگریس ، بیجو جنتا دل ، انا ڈی ایم کے، شیوسینا ، ترنمول کانگریس سمیت زیادہ تر پارٹیوں نے وھیپ جاری کر کے اپنے ارکان پارلیمنٹ کو ایوان میں حاضر رہنے کی ہدایت کی ہے۔ بحث کیلئے 7 گھنٹے کا وقت مقرر کیا گیاہے اور بحث میں حصہ لینے والی سبھی پارٹیوں کیلئے وقت بھی مقرر کردیا گیاہے۔ سب سے زیادہ وقت حکمراں بی جے پی کو اور سب سے کم لوک جن شکتی پارٹی کو ملا ہے۔ بی جے پی کو تین گھنٹہ 33 منٹ ، کانگریس کو 38 منٹ ، آل انڈیا انا ڈی ایم کے کو 29 منٹ، ترنمول کانگریس کو 27 منٹ ، بیجو جنتا دل کو 15 منٹ، شیوسینا کو 14 منٹ، تیلگو دیشم پارٹی کو 13 منٹ، ٹی آر ایس کو 9 منٹ، سی پی آئی ایم کو 7 منٹ، سماجوادی پارٹی کو 6منٹ، این سی پی کو 6 منٹ اور ایل جے پی کو 5 منٹ کا وقت دیا گیا ہے۔ پارلیمانی امور کے وزیر اننت کمار نے کہا ہے کہ ہم لوگ تحریک عدم اعتماد کے سلسلے میں پوری طرح مطمئن ہیں۔ نمبر کے معاملے میں مودی حکومت کو واضح طور پر اکثریت حاصل ہے۔ اکیلے بی جے پی کے ہی 273 ارکان ہیں۔ اس کے علاوہ این ڈی اے کے 39 ارکان بھی ہیں۔ اس طرح ہماری مجموعی طاقت ایوان میں 57 فیصد کی اکثریت رکھتی ہے۔ تحریک عدم اعتماد پیش کرنے والی ٹی ڈی پی تمام سیاسی پارٹیوں سے تحریک کی حمایت کی اپیل کی ہے۔ موجودہ لوک سبھا کا یہ پہلی عدم اعتماد تحریک اپوزیشن کیلئے اپنی متحدہ طاقت کو دکھانے کا ایک ذریعہ ہوسکتا ہے۔ بی جے پی کیلئے راحت کی بات یہ ہے کہ اب تک ناراض چل رہی شیوسینا بھی حکومت کی حمایت کیلئے تیار ہوگئی ہے ۔ شیوسینا کے غیر یقینی رویے کے پیش نظر جمعرات کی صبح بی جے پی کے قومی صدرت امیت شاہ نے شیوسینا کے سربراہ ادھو ٹھاکرے سے فون پر بات کی اور ان سے حمایت کی اپیل کی۔ اس کے بعد شیوسینا نے حمایت کا اعلان کردیا۔ شیوسینا کی بی جے پی کی حمایت کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ یہ تجویز ٹی ڈی پی نے پیش کی ہے، جس سے شیوسینا ناراض ہے۔ جب شیوسینا کے ایک ایم پی کے ساتھ طیارہ میں بدتمیزی کامعاملہ سامنے آیا تھا اس وقت شہری ہوابازی کے مرکزی وزیر تیلگو دیشم کے تھے اور انہوں نے شیوسینا کے ساتھ تعاون نہیں کیا تھا جس سے شیوسینا کی بدنامی ہوئی تھی۔ یہی وجہ ہے کہ جب ٹی ڈی پی کے ارکان ادھو ٹھاکرے سے حمایت طلب کرنے آئے تھے تو انہوں نے ملنے سے انکار کردیا تھا۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close