دہلیہندوستان

’میں، میرا، مجھے، میں نے‘، مودی کے انٹرویو کا خلاصہ: سرجے والا

نئی دہلی: کانگریس نے وزیراعظم نریندر مودی کے انٹرویو کو پیروڈی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی مدت کار میں جو کچھ بھی ہوا ملک کی عوام اس کا خمیازہ بھگت رہی ہے۔سرجے والا نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم مودی کے انٹرویو پر پلٹوار کیا۔ انہوں نے کہا کہ مودی کا انٹر ویو کھودا پہاڑ نکلی چہیا کی مانند تھا۔ انہوں نے کہا پورا انٹرویو محض میں، میں نے، مجھے اور میرا پر مبنی تھا۔ سرجے والا نے مودی پر حملہ بوتے ہوئے کہا، ’’مودی جی آپ کی میں نے 55 مہینوں میں ملک کو بربادی کے کگار پر لاکر کھڑا کر دیا ہے۔‘‘
سرجے والا نے مودی حکومت کے اب تک کی میعاد کار کے دوران نوٹ بندی اور گڈس اینڈ سروس ٹیکس (جی ایس ٹی) جیسے فیصلوں پر ان کی نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ ان کے ان فیصلوں سے لوگوں کو کتنی تکلیف ہوئی ملک کی عوام یہ سب اب بھی جھیل رہی ہے۔انہوں نے اس تعلق سے ایک فہرست پیش کی اور کہا کہ مودی حکومت میں لوگوں کے سامنے بینک فراڈ، کالا دھن، 15 لاکھ روپے ہر کھاتے میں، رافیل پر بدعنوانی، مہنگائی، ملکی سلامتی سے کھلواڑ، کسان پر مار اور اچھے دن؟ کی مار ہے۔
وزیر اعظم نریندر مودی کے انٹرویو کو کانگریس نے جملوں کا انٹرویو قرار دیا ہے۔ کانگریس کے ترجمان رندیپ سنگھ سرجے والا نے ٹوئٹ میں کہا، ’’نہ زمینی حقیقت کی درکار، نہ کئے ہوئے وعدوں سے سروکار، جملوں سے بھرا مودی جی کا ساکشاتکار (انٹرویو)۔‘‘
سرجے والا نے ساتھ ہی کئی مسائل کو بھی اٹھایا۔ انہوں نے کہا کہ ملک آج کے دن نوٹ بندی، گبر سنگھ ٹیکس، بینک فراڈ، کالا دھن والوں کی موج، 15 لاکھ ہر کھاتے میں، رافیل بدعنوانی، مہنگائی، قومی سلامتی سے کھلواڑ، کسان پر مار اور اچھے دن کے انتظار میں ہے۔‘‘اس دوران سرجے والا نے مودی سے 10 سوالوں کے جواب بھی مانگے۔سرجے والا نے کہا کہ وزیر اعظم اب اتنے لاچار ہیں کہ وہ اپنے انٹرویو میں یہ بھی نہیں بتا رہے کہ وہ اگلا لوک سبھا الیکشن کہاں سے لڑیں گے، یا پھر لڑیں گے ہی نہیں!

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close