ہندوستان

نظم و ضبط کی بات کیجئے تو ’ڈکٹیٹر‘ کہاجاتا ہے:مودی

نئی دہلی:نائب صدر اور راجیہ سبھا کے چیئرمین وینکیا نائیڈو کی کتاب کی رسم اجرا کے موقع پر اتوار کو وزیر اعظم نریندر مودی نے اشاروں میں ہی اپوزیشن اور خاص طور سے کانگریس پر طنز کسا. وزیراعظم نے کہا کہ نظم و ضبط کی بات کیجئے تو آج کل آپ کو غیر جمہوری، ‘ڈکٹیٹر’ بھی کہہ دیا جاتا ہے. نائب صدر کی تعریف کرتے ہوئے وزیر اعظم نے مزید کہا کہ نائیڈو ڈسپلن پر عمل کرنے والے شخص ہیں. پی ایم مودی نے کہا کہ ایوان جب مناسب طریقے سے چلتا ہے تو کرسی پر کون بیٹھا ہے، اس میں کیا صلاحیت ہے، کیا خصوصیت ہے، اس پر زیادہ لوگوں کا دھیان نہیں جاتا ہے.
اراکین کے خیالات ہی آگے رہتے ہیں، لیکن جب ایوان نہیں چلتا ہے تو کرسی پر جو شخص ہوتا ہے اسی پر توجہ رہتی ہے. وہ کس طرح نظم و ضبط لا رہے ہیں، کس طرح سب کو روک رہے ہیں اور اسلئے گزشتہ سال ملک کو وینکیا نائیڈو کو قریب سے دیکھنے کا موقع ملا. ایوان نہ چلنے دینے کے لئے کانگریس سمیت پورے اپوزیشن پر نشانہ لگاتے ہوئے مودی نے کہا کہ اگر ایوان ٹھیک سے چلا ہوتا تو یہ خوش قسمتی نہ ملتی. اس پر خود نائب صدر بھی مسکرائے. وزیر اعظم جب بول رہے تھے تو اسٹیج پر سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ اور کانگریس کے سینئر لیڈر آنند شرما کے ساتھ ہی ناظرین میں کانگریس کے کئی لیڈر موجود تھے. آخر میں وزیر اعظم نے کہا کہ ان کی(نائیڈو) خواہش ہے کہ ایوان میں شدید بحث ہو، ان کی مسلسل کوششوں سے یہ خواب بھی پورا ہو جائے گا. کتاب کے رسم اجرا کے موقع پر سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ نے کہا، ‘گزشتہ ایک سال کے ان کے (نائیڈو) مدت کے دوران ان کا سیاسی اور انتظامی تجربہ صاف دکھائی دیتا ہے. اگرچہ ان کا بیسٹ آنا ابھی باقی ہے. ایک شاعر نے بھی کہا ہے کہ ستاروں کے آگے جہاں اور بھی ہیں، ابھی عشق کے امتحان اور بھی ہیں. ‘

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close