ہندوستان

نیتاجی کے پڑپوتے کا ریاستی بی جے پی کی کمان خود کو دیئے جا نے کا مطالبہ

کولکاتہ :ریاستی بی جے پی میںجاری صف بندی کو نیتا جی سبھاش چندر بوس کے پڑپوتے نے مزید ہوا دے دی ہے۔ فی الحال ریاستی بی جے پی میں نائب صدر کی ذمہ سنبھال رہے نیتا جی کے پڑپوتے چندر کما بوس نے اب اپنے لئے صدر کے عہدے کا مطالبہ کیا ہے۔ اس کے لئے انہوںنے ریاست میں پارٹی کو اقتدار تک پہنچانے کاحوالہ دیا ہے۔
بدھ کی صبح انہوں نے کہا کہ موجودہ بی جے پی قیادت اتنی مضبوط نہیں ہے کہ اقتدار پر قبضہ کر سکے۔ اگر انہیں پارٹی میںاہم ذمہ داری ملے اور موقع دیا جائے کہ بنگال بی جے پی کوکنٹرول کریں تو وہ مغربی بنگال کے اقتدار پر بی جے پی کے قبضہ کو یقینی بنائیںگے۔ انہوں نے کہا، ”اگر مجھے ریاستی بی جے پی کی کمان ملتی ہے تو یقینی طور پر مین ریاست کے اقتدار پر بی جے پی کو لا دوںگا”۔واضح ہو کہ طویل عرصہ سے ریاستی بی جے پی مین بوس اور دیگر قیادت کے درمیان تنازعات کی خبریں آتی رہتی ہیں۔ اس دوران بوس نے قومی صدر امت شاہ کو بھی خط لکھا ہے اور دعویٰ کیا ہے کہ ریاستی بی جے پی کی قیادت بے حد کمزور ہے۔ اگر اسی طرح سے چلتا رہا تو ممتا بنرجی کے سامنے آنے والے 50سالوں تک مغربی بنگال پر بی جے پی کا اقتدار قائم نہیں ہو سکے گا۔ اس درمیان ایک اور تنازعہ کھڑا کرتے ہوئے انہوں نے اب خود کو ہی ریاستی بی جے پی کی کمان سونپے جانے کا مطالبہ کر دیا ہے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close