دلچسپ وعجیب

نیند پوری کرنے پر جاپان کی کمپنی دے گی بونس

ٹوکیو: جاپان کی ایک کمپنی نے اپنے ملازموں سے کہا ہے کہ اگر وہ مکمل نیند لیتے ہیں تو انہیں اس کا معاوضہ بھی دیا جائے گا۔جاپان دنیا کے ان ممالک میں شامل ہے جہاں دفاتر کے اوقاتِ کار دیگر دنیا کے مقابلے میں قدرے زیادہ ہیں اور اس کے لیے ملازمین اپنی نیند کی قربانی بھی دینے سے گریز نہیں کرتے لیکن نیند پوری نہ ہونے سے کارکنوں کی پیداواری استعداد متاثر ہوتی ہے اور اسی بنا پر ایک کمپنی نے اپنے ملازموں کو نیند مکمل کرنے پر بونس پوائنٹس دینے کا اعلان کیا ہے جنہیں وہ ہوٹلوں اور ریستورانوں میں استعمال کرسکیں گے۔
ٹوکیو میں واقع شادی بیاہ کے انتظامات کرانے والی ایک کمپنی نے حال ہی میں اپنے ملازمین کے لیے نیند پوری کرنے کے ترغیبی پروگرام کا اعلان کیا ہے۔ اس کےلیے ایک اسٹارٹ اپ کمپنی ’ایئرویو‘ سے مدد لی گئی ہے جو تمام ملازمین کے سونے اور جاگنے کے معمولات نوٹ کرے گی۔
اس کے لیے ملازموں کو اپنے اسمارٹ فون میں ایئر ویو کی ایپ انسٹال کرنا ہوگی جس کے ذریعے مسلسل ان کی نیند کو نوٹ کیا جاتا رہے گا۔ اس کا ڈیٹا خود کمپنی کے پاس بھی جاتا رہے گا اور یوں نیند مکمل ہونے پر ملازم کے پوائنٹس جمع ہوتے رہیں گے۔ کمپنی کے مطابق اس طرح ملازم رات کو پرسکون نیند سوئیں گے اور صبح تازہ دم ہوکر دفتر آئیں گے جس سے ادارے کی کارکردگی بڑھے گی۔
اس کے لیے سوتے ہوئے اسمارٹ فون میں ایپ چلا کر اسے بستر پر رکھنا ہوگا ایپ ازخود جسمانی حرکات سے ان کی نیند کی گہرائی اور دورانیہ نوٹ کرتی رہے گی۔ کمپنی کے مطابق کم سے کم رات بھر 6 گھنٹے نیند لینا لازمی ہے، اگر مسلسل پانچ روز تک ملازم سکون سے نیند لیتا ہے تو اسے 500 پوائنٹ ملیں گے جو ساڑھے چار ڈالر کے برابر ہوں گے۔ اس سے وہ دفتر کی عمارت میں واقع کیفے ٹیریا سے اتنی ہی رقم کی کوئی بھی شے حاصل کرکے کھاسکیں گے یا مشروب پی سکتے ہیں۔
اگر ملازم مسلسل چھ روز تک چھ گھنٹے روزانہ نیند لیتا ہے تو اسے 1000 پوائنٹس یا نو ڈالر ملیں گے۔ اسی طرح پورے ماہ یہ صحت مند معمول رکھنے پر وہ اضافی 1000 پوائنٹس کا مستحق بھی ہوگا تاہم یہ نظام ابھی آزمائشی طور پر شروع کیا گیا ہے۔
جاپانی کمپنی نے 10 اکتوبر سے اس کا اطلاق شروع کردیا ہے جس کا اہم مقصد رقم سے زیادہ ملازموں کی صحت کا خیال رکھنا ہے کیونکہ جاپان میں لوگ نیند کی کمی اور کام کی زیادتی کی وجہ سے خودکشی تک کرنے لگے ہیں۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close