پٹنہ

وزیر اعلیٰ نے بھگوان مہاویر کے 2544ویں یوم پیدائش کے موقع پر پاوا پوری مہوتسو کا افتتاح کیا

پٹنہ :وزیر اعلیٰ جناب نتیش کمار نے جین دھرم کے 24ویں’ترتھنکر بھگوان مہاویر کے2544 یوم وفات(’نروان دیوس‘) کے موقع پر انٹر نیشنل پاوا پوری مہوتسو کا افتتاح شمع روشن کر کے کیا ۔ اس موقع پر منعقد پروگرام کو خطاب کر تے ہوئے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ آج ’نروان دیوس‘ہے ، جین دھرم میں ’تریودشی‘ اور دھنتیرس سے اس کی شروعات ہو تی ہے اور دیوالی میں اس کا شایان شان انعقاد ہو تا ہے ۔ بچپن میں والدہ کے ساتھ آیا کر تے تھے ۔ اس موقع پر مجھے ایک واقعہ یاد ہے کہ مجھے بھی ایک بڑا لڈو پرشاد کے طور پر ملا تھا ۔ یہ پاک زمین ہے نر وارن کی زمین ہے ، بودھ اور مہا ویر ہم عصر تھے ۔ دونوں نے اپنے دانش سے بہار کو پوری دنیا میں قابل فخر بنا یا ہے ۔ مہا ویر کے پیدائش کے مقام ویشالی یاکنڈل پور یالچھوار پہاڑ ہو ، سب تو بہار میں ہی ہیں ۔ مہاویر کی ایک مورتی جو ان کی زندگی میں ان کے بھائی نے بنوائی تھی وہ لچھوار پہاڑ پر سے چوری ہو گئی تھی۔ ہم لوگوں نے بڑی مستعدی سے پھر سے وہ مورتی حاصل کر لی ہے ۔ جسے نیچے میں مندر میں نصب کر دیا گیا ہے ۔ بعد میں اوپر پہاڑ پر تعمیر ہو نے والے مندر میں اسے دوبارہ نصب کیا جائے گا ۔ اس کے لیے جین مذہب کے بہت سے لوگوں کو ، جو قومی سطح پر عقیدت مند ہیں ان لوگوں نے بھی اس کے لیے شکریا ادا کیا ہے ۔وہاں پر مندرکی تعمیر کر نا ہے اس میں جین لوگ اپنے خیالات رکھیں ۔ ہم لوگ راستہ مہیاکرائیں گے اور سیکورٹی سے متعلق ضرورتوں کوپورا کریں گے ۔جب نالندہ انٹر نیشنل یونیورسٹی دوبارہ تعمیر ہوئی تو اس میں آنے والے بیرن ممالک کے طلبا اور اساتذہ کو ذہن میں رکھتے ہوئے پاوا پوری میں بھگوان مہاویر کے نام پر اعلیٰ درجہ کا میڈیکل سائنس انسٹی ٹیوٹ بنا یاگیا ہے ۔راجگیر میں کرکٹ اسٹیڈیم کی تعمیر ، اسپورٹس اکیڈمی ، آئی سی ٹی سی کی تعمیر ہو نے والی ہے ۔ نالندہ یونیورسٹی کمفلیکٹ ریزلیوشن سینٹر بنے گا ۔ہم بھید بھائو کو سمجھیں ، لیکن آپس میں کوئی بھیدبھائو نہ ہو ، جو محبت کی تعلیم دے وہی ہمارا مذہب ہو ۔ ابھی کچھ دیر پہلے جو پراتھنا کی گئی ہے ، اس میں سار ی چیزیں کہہ دی گئی ہیں ۔ وزیر اعلیٰ نے اس کے نکات پر بات کر تے ہوئے کہا کہ اس میں الگ الگ مت کے ہو نے کے باوجود تمام لوگوں کے افکار کا احترام کر نا چاہئے ۔سب کی منزل ایک ہے ، چاہے آپ کسی بھی مت کے ہوں ،اس لیے سب کوایک دوسرے کا احترام کر نا چاہئے ۔
وزیر اعلیٰ نے کہا کہ اس میں پیا رمحبت کی تعلیم دی ٔکئی ہے ، سب لوگ آپس میں مل کر رہیں ۔جیواور جینے دو کے اصول پر قائم رہنا چاہئے ۔زمین سب کی ہے ، جانور ،پرندے اور تمام مخلوقات کا اس پر حق ہے ، ایسا کام کریں جس میں سب کی خوش حال ہو ۔بھگوان مہاویر کے لیے جو پراتھنا کی گئی کا اس طرح کی باتیں گاندھی کی کے خیالات میں بھی ملتی ہیں ۔ گاندھی جی کہا کر تے تھے کہ یہ زمین مخلوق کی ہر ضرورت کو پورا کر نے کی استطاعت رکھتی ہے لیکن لالچ کو نہیں ۔سات سماجی پاپوں کے تحت اصول کے بغیر سیاست، کام کے بغیر دولت جمع کر نے کاتصور ، اخلاقیات کے بغیر تجارت ، صوابدید کے بغیر خوشی، کردار کے بغیر علم ، اخلاقیات کے بغیر تجارت ، انسانیت کے بغیر سائنس ، اور قربانی کے بغیر پوجا ہے ۔ گاندھی جی کے خیالات اور بھگوان مہاویر کی پراتھنا کا مطلب ایک ہی ہے ۔ جس کے تئیں میری سپردگی ہے ۔ مہاویر کے مجسمہ کو سلام کے لیے ہم لوگ حاضر ہوئے ہیں لیکن ان کی باتوں کو دل میں رکھنا ہو گا ، بہتر طریقہ سے سوچنا ہو گا ۔وزیر اعلیٰ نے کہا کہ عوام نے خدمت کی ذمہ داری دی ہے ، عوام کے پاس ہی وہ طاقت ہو تی ہے جس سے چاہے اقتدار میں بیٹھاسکتی ہے ۔ جسے چاہے ہٹا سکتی ہے ۔ اقتدار خدمت کے لیے ملتا ہے ، میوہ کے لیے نہیں ، کچھ لوگ اقتدار کا غلط استعمال کر تے ہے ۔وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ہم انصاف کے ساتھ ترقی کے راستے پر آگے بڑھ رہے ہیں ، سماجی سدھار کے معاملہ میں ہماری مہم چل رہی ہے ۔شراب بندی کے بعد غریب اپنی گاڑھی کمائی کا بڑا اپنی زندگی کے معیار کو بہتر بنا نے میں خرچ کر رہا ہے۔ خواتین اور بچے بہت خوش ہیں ، کنبہ اور سماج کے ماحول میں کافی تبدیلی آئی ہے۔شراب بندی کی مہم میں جین سماج کے لوگ اسے تشہیر کریں ۔ عوامی شعور اور حمایت سے اسے منزل تک پہنچا یاجاسکتا ہے ۔ بچوں کی شادی اور جہیز کی روایت کو ختم کر نا ہوگا ۔ جہزیر کی برائی تو اب بڑے لوگوں سے پھیلتے پھیلتے غریب لوگوں تک آگئی ہے ۔ ہمارے بہار میں مہاویر ، بودھ، گروگووند سنگھ جی کی پیدائش ،بابا مخدوم صاحب ، کوٹلیا کی اقتصادیات ، آریہ بھٹ کا صفر ، یہ سب بہار کا قابل فخر ماضی ہے ۔ یہ تعلیم کا قابل فخر مرکز رہا ہے ۔ یہاں سے باپو نے چمپارن ستیہ گرہ شروع کی اور نیلہوں سے کسانوں کے مسائل کا حل کیا ۔ یہاں ملک کا پہلا انٹر نیشنل بہار میوزیم بنا ہے ۔ سمراٹ اشوک کنونشن سنیٹر ، تہذیب باب ، چنڈشوک سے دھما شوک کا علامتی مجسمہ بنا یا گیا ہے ۔ ریاست میں کئی ترقیات کے کام کیے جارہے ہیں ، جس سے لوگوں کا بہار کے تئیں نظریہ کافی بد لا ہے ۔
وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ماحولیات کے تئیں ہم تمام لوگوں کو ہوشیار رہنا چاہئے ۔ ہم لوگوں نے بہار کا ہریالی علاقہ 9فیصد سے بڑھا کر 15فیصد تک پہنچا دیا ہے ۔ اس کے لیے تیس کروڑ پودے لگا ئے گئے ہیں ۔اپنے لالچ میں ماحولیات کو بربات نہ کریں ۔اپنے مذہب میں یقین رکھنا اچھی بات ہے ، لیکن دوسرے مذہب کا احترام کریں ۔
اس موقع پر وزیر اعلیٰ نے شیتامبر ،دگمبر اور جین مندر میں جاکر درشن کیا اور پوجا کی ۔ شتمامبر مندر میں وزیر اعلیٰ نے واٹر اے ٹی ایم کا افتتاح کیا۔ اس کے بعد ضلع انتظامیہ کے ذریعہ منعقد نمائش میلے کا افتتاح کر کے اسٹالوں کا معائنہ کیا ۔ اس موقع پر وزیر اعلیٰ نتیش کمار کو گلدستہ اور مومنٹو دے کر ان کا خیر مقدم کیا گیا ۔ جناب رویندر کیرتی جی مہاراج کے ذریعہ وزیر اعلیٰ نتیش کمار کو سری پاوا پوری جی دگمبر جین حلقہ کا آوارڈ ، ’’بھگوان مہاویر انٹر نیشنل ایوارڈ‘‘سے سرفراز کیا ۔
اس موقع پر فن و ثقافت کے وزیر جناب کرشنا کمار رشی، سوامی رویندر کریتی جی مہاراج ، سوتمبر اچاریہ ، سرج جی مہاراج نے بھی پروگرام کو خطاب کیا ۔
اس موقع پررورل ورک محکمہ کے وزیر و نالندہ کے انچارج وزیر جناب کوشلندر کمار، رورل ڈیولپمنٹ کے وزیر جناب شرون کمار، ممبر پارلیمنٹ جناب کوشلیندر کمار ، ممبر اسمبلی وجیندر کمار ، ممبر اسمبلی چندر سین پرساد ، ممبر اسمبلی روی جیوتی کمار، ممبر قانو ن ساز کونسل ہیرا بند ، بہارشریف میئر وینا کماری ، انڈیا ٹوڈے ریسرچ گروپ کے اڈیٹر اجیت کمار جھا ، گوپال جین جی ، اجے کمارجین ، پربھات جین ، پراگ جین ، محکمہ سڑک تعمیرات کے پرنسپل سیکریٹری امرت لال مینا ، وزیر اعلیٰ کے سیکریٹری جناب منیش کمار ورما، ڈی آئی جی پٹنہ جناب راجیش کمار،نالندہ کے ڈی ایم ، ایس پی سمیت دیگر جین منی اور شخصیات موجود تھیں ۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close