بین الاقوامی

وینزویلا ڈرون دھماکے میں امریکہ کا ہاتھ نہیں: امریکہ

واشنگٹن: امریکہ نے وینزویلا کےصدرنکولس مادرو پر ہوئے ڈرون حملے میں کسی بھی طور پر اس کا ہاتھ ہونے سے انکار کیا ہے۔اتوار کے روز امریکہ کے قومی سلامتی کے مشیر جان بولٹن نے یہ بات کہی۔مسٹر بولٹن نے فاکس نیوز سنڈے کو دیئے انٹرویو میں کہا، "بلاشبہ میں یہ کہہ سکتا ہوں کہ اس کے پیچھے امریکہ کا ہاتھ نہیں ہے.”مسٹر مادرو پر ہفتہ کو ایک فوجی پروگرام کے دوران ڈرون سے حملہ کرنے کی کوشش کی گئی تھی. وینزویلا حکومت نے اسے مسٹر مادرو کے قتل کی ناکام کوشش قرار دیتے ہوئے اس کے لئے کولمبیا اور امریکہ کو ذمہ دار ٹھہرایا تھا۔اس دھماکے کے بعد مسٹر مادرو نے کہا "دھماکہ خیز مادہ سے لدا وہ ڈرون میری طرف آ رہا تھا لیکن آپ لوگوں کی محبت نے ایک ڈھال کی طرح کام کیا اور مجھے مکمل یقین ہے کہ میں اب زیادہ وقت تک آپ کے درمیان رہوں گا‘‘۔حملے کی ابتدائی جانچ میں پتہ چلا ہے کہ یہ سازش کولمبیا اور امریکہ کی جانب سے رچی گئی۔ اس معاملے میں کچھ جرائم پیشہ کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔وینزویلا کے وزیر اطلاعات و نشریات جارج روڈریگز کے مطابق کراکس میں ایک فوجی پروگرام کے دوران دھماکہ خیز مادوں سے لدا ایک ڈرون پھٹ گیا جس میں سات سیکورٹی اہلکار بھی زخمی ہو گئے. ’نیشنل موومنٹ آف سولجرس ان ٹی شرٹ‘ نامی تنظیم نے حملہ کی ذمہ داری لیتے ہوئے کہا کہ تنظیم نے حملے کے لئے دو ڈرون طیاروں کا استعمال کیا لیکن سکیورٹی کی نظروں میں آنے سے وہ اپنے مقصد میں کامیاب نہیں ہو پائے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close