بین الاقوامی

وینز ویلا کے صدر مدورو ڈرون حملے میں ’بچ گئے‘

وینزویلا کے صدر کے قتل کی سازش کے لئے کولمبیا ذمہ دار

کراکس، وینز ویلا کے حکام کا کہنا ہے کہ ملک کے دارالحکومت کراکس میں صدر نکولس مدورو کے خطاب کے دوران ڈرون حملہ ہوا ہے تاہم صدر اس حملے میں محفوظ رہیں ہیں۔تقریب کے دوران دو ڈرون آئے جس میں دھماکہ خیز مواد نصب تھا۔وزیرِ اطلاعات جارج روڈریگز کا کہنا تھا کہ یہ حملہ صدر کی جان لینے کی کوشش تھی جس میں سات فوجی زخمی ہوئے۔صدر مدورو ایک کھلے مقام پر ایک فوجی تقریب سے خطاب کر رہے تھے کہ اچانک انھوں نے اور ان کے ساتھ موجود اہلکاروں نے فضا میں دیکھنا شروع کر دیا جس کے بعد آواز بند کر دی گئی۔نشریات معطل ہونے سے قبل بہت سے فوجیوں کو بھاگتے ہوئے دیکھا گیا۔اسی دوران بارود سے بھرے دو ڈرونز صدر کے قریب پہنچ گئے۔انھوں نے ملک کے دائیں بازو کے گروہ پر حملے کا الزام عائد کیا۔ وزیر اطلاعات نے کہا کہ مخالفین انتخابات میں ہارنے کے بعد ایک بار پھر ناکام ہو گئے ہیں۔یاد رہے کہ رواں سال مئی میں ہونے والے انتخابات میں صدر نکولس مدورو ایک بار پھر چھ سال کے لیے ملک کے صدر منتخب ہوئے تھے۔وزیرِ اطلاعات جارج روڈریگز کے مطابق زخمی فوجیوں کا علاج کیا جا رہا ہے۔ تاحال کسی گروہ نے اس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔اس سے قبل جون سنہ 2017 میں ایک ہیلی کاپٹر حملے میں وینزویلا کی سپریم کورٹ پر گرنیڈ گرائے گئے تھے۔آسکر پرییز نامی شخص نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا تھا کہ وینزویلا کے عوام صدر مدورو کی حکومت کے خلاف اٹھ کھڑے ہوں۔ وہ جنوری میں کراکس کے قریب پولیس کی کارروائی میں مارا گیا تھا۔
وینزویلا کے صدر کے قتل کی سازش کے لئے کولمبیا ذمہ دار
کراکس :وینزویلا کے صدر نکولس مادورو نے کہا ہے کہ ہفتہ کو ان کے قتل کے لئے ڈرون میں دھماکہ خیز مادہ کا استعمال کیا گیا تھا لیکن خدا کے فضل سے وہ صحیح سلامت ہیں۔مسٹر مادورو نے یہ بھی کہا ہے کہ اس میں کولمبیا اور امریکہ کا ہاتھ ہے اور دائیں بازو کے گروپ نےاس سازش کو انجام دیا ہے ۔اس دھماکے کے بعد مسٹر مادورو نے کہا ابتدائی تفتیش سے پتہ چلتا ہے کہ یہ سازش کولمبیا اور امریکہ کی جانب سے رچی گئی ہے جہاں کئی ایسے لوگ رہتے ہیں جو وینیزویلا سے نکال دیے گئے تھے۔ اس معاملے میں کچھ افراد کو گرفتار بھی کیا گیا ہے. "انہوں نے کہا "دھماکہ خیز مادہ سے لیس ڈرون میری طرف آ رہا تھا لیکن آپ لوگوں کی محبت نے ایک ڈھال کی طرح کام کیا اور مجھے یقین ہے کہ میں ابھی اور زیادہ وقت تک آپ کے درمیان رہوں گا۔وزیرِ اطلاعات جارج روڈریگز نے بتایا کہ کراکس میں ایک فوجی پروگرام کے دوران دھماکہ خیز مادہ سے لیس ایک ڈرون پھٹ گیا۔
جائے حادثہ پر موجود عینی شاہدین نے بتایا کہ انہوں نے دو دھماکوں کی آوازیں سنی تھیں۔ اس دوران سات سیکورٹی اہلکار بھی زخمی ہو گئے ہیں۔اس دوران اس حملے کی ذمہ داری ایک نامعلوم تنظیم "نیشنل موومنٹ آف سالجرس ان ٹی شرٹ” نے لی ہے۔ تنظیم نے ٹویٹ کرکے کہا کہ اس نے دو ڈرون طیاروں کو اس کام کے لئے لگایا تھا لیکن سکیورٹی کی نظروں سے وہ بچ نہیں سکے ۔تنظیم نے کہا ہے "ہم نے ثابت کر دیا ہے کہ ان پر حملہ کیا جا سکتا ہے، حتیٰ کہ ہمیں اس مرتبہ کامیابی نہیں ملی ہے لیکن یہ وقت کا کھیل ہے اور آگے بھی اس طرح کی کوشش کی جائے گی۔”
مسٹر مادورو کے اس بیان کہ اس حملے میں کولمبیا کے صدر جوآن مینوئل سانتوس کا ہاتھ ہے، پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے انہی کی حکومت کے ایک ذرائع نے کہا کہ یہ الزام بے بنیاد ہے کیونکہ وہ ہفتہ كو اپنی پوتی کے ساتھ ایک چرچ میں مصروف تھے اور کم سے کم وہ ایسا تو نہیں کر سکتے ہیں کہ پڑوسیوں کی حکومت کو گرا دیں۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close