بہارمتھلانچل

پروفیسر پرجان لیواحملہ کے خلاف آئیسا کا مظاہرہ

بتیا:سرعام موب لنچنگ کے ذریعہ موتیہاری میں مرکزی یو نیورسٹی کے پروفسر سنجے کمار کو سنجے کمار کو جلاکر مارنے کی کوشش میں چمپارن کی تاریخ کو داغدار کیا ہے۔ اس کی جتنی بھی مذمت کی جائے وہ کم ہے۔ مذکورہ باتیں آئیسا لیڈر وایم جے کے کالج طلبا یونین کی جنرل سکریٹری نکھیتا کمار ی نے مودی کے پتلے کو نذرآتش کرنے کے بعد اجلاس سے خطاب کے دوران کہی۔ انہوں نے کہا کہ سنجے کمار موت اور زندگی کے بیچ پٹنہ کے پی ایم سی ایچ میں جوجھ رہے ہیں۔ لیکن پولس مجرم کو پکڑنے میں پوری طرح ناکام رہی ہے۔ سابق طلبا لیڈر سنیل کمار راؤ نے کہا کہ سنگ والے نے واجپئی کے خلاف پوسٹ کا بہانہ بناکر پروفسر سنجے کمار کو مارنے کی کوشش کی۔ جبکہ حقیقت یہ ہے کہ یونین سے جڑے وائس چانسلر کروڑوں کے گھوٹالہ میں پھنسے ہیں جس کو لے کر پروفسر سنجے کمار استاذ وطلبا کے ساتھ مل کر مظاہرہ کررہے تھے۔ جس سے گھبرا کر وائس چانسلر نے سنجے کمار پر جان لیوا حملہ کرادیا۔ طلبا راجد کے صدر سونوکمار نے کہا کہ مودی کے آنے کے بعد ملک میں کوئی محفوظ نہیں ہے۔ ایسے میں مودی حکومت کے بنے رہنے کا کوئی حق نہیں ہے۔ ایم جے کے کالج کے ممبر آئیسا لیڈرانصار خان نے کہا کہ ملک کے عوام کو اپنی حفاظت کے لئے سڑکوں پر اترنا پڑے گا۔ مجلس کے خطاب کرنے والوں  میں  بھگت سنگھ، راجن کمار پٹیل ، انقلابی نوجوان سریندر چودھری، رام بابو کمار ، پربھات کمار، ونود کشواہا وغیرہ نے خطا ب کیا۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close