اتر پردیش

! پولیس نے مکمل کی جانچ، تنوی اور انس کا پاسپورٹ ہو سکتا ہے رد

لکھنئو کے پاسپورٹ آفس میں ایک افسر پر بد سلوکی کا الزام لگا کرسرخیوں میں آئے ہندو ۔مسلم جوڑے انس اور تنوی سیٹھ کا پاسپورٹ رد کیاجا سکتا ہے۔اس سرخیوں میں رہنے والے پاسپورٹ معاملے کی جانچ پوری ہو چکی ہے اور پولیس کے مطابق ،انہیں تنوی کے لکھنؤ میں رہنے سے متعلق کوئی دستاویز نہیں ملا ہے۔

اس معاملے میں پولیس اور مقامی نوٹیفکیشن یونٹ (ایل آئی یو) نے اپنی ایڈورس رپورٹ لگا دی ہے۔ اب مانا جا رہا ہے کہ پولیس رپورٹ کی بنیاد پرتنوی اور اس کے شوہر انس صدیقی کو پاسپورٹ آفس نوٹس بھیج کر وضاحت طلب کرے گا۔ اگر انس اور تنوی نے اطمینان بخش جواب نہیں دیا تو ان کا پاسپورٹ رد ہوجائے گا۔

بتا دیں کہ پاسپورٹ درخواست کے طے شدہ ضوابط کے مطابق،عرضی گزار کا عرضی میں بتائے پتے پر ایک سال سے زیادہ وقت تک رہنا ضروری ہے۔ لیکن پولیس کو جانچ میں ایسے کوئی ثبوت نہیں ملے۔ معاملے میں لکھنؤ کے ایس ایس پی دیپک کما رنے کہا کہ لکھنئو کے پتہ پر پچھلے ایک سال سے تنوی نہیں رہتی ہے۔ ایڈریس ویریفکیشن رپورٹ پاسپورٹ آفس کو بھیج دی گئی ہے۔ آگے کی کارروائی پاسپورٹ آفس کرے گا۔

دوسری جانب، پاسپورٹ آفس سے ملی معلومات کے مطابق، غلط معلومات دینے کے معاملے میں محکمہ انس اور تنوی پر 5،000 روپے کا جرمانہ بھی عائد کر سکتا ہے۔ ساتھ ہی محکمہ کو دھوکہ دہی اور گمراہ کرنے کے لئے تنوی کے خلاف قانونی کارروائی کے تحت ایف آئی آر بھی درج کروائی جا سکتی ہے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close