سیاست

پی جی اسٹوری: وہ ڈاکٹر تھی، پر ہفتوں تک حیض کا خون لگی بیڈ شیٹ پر سوتی تھی

یہ کہانی ہے 27 سال کی خوشبو کی جو 19 سال کی عمر میں مرادآباد سے دہلی اپنے خوابوں کے ساتھ آئیں تھی۔ان آتھ سالوں میں انہوں نے خوب زندگی اور شہر دیکھے۔وہ میڈیا کمپنی میں کام کرتی ہیں۔

گریجوئیشن کے دوران یوسف سرائے کے پی جی میں 18 مہینے رہی کسی کے بھی ساتھ ایڈجسٹ کرنا میرے مزاج میں شمار تھا۔کوئی نخرہ نہیں ۔ان 18 مہینوں میں صرف دو ہی کمرے بدلے۔ایک کمرے میں 6 مہینے دوسرے میں 1 سال رہی ۔بس میری ایک ہی ضرورت تھی ،آپ چاہیں تو نخرہ کہہ سکتے ہیں۔مجھے اے ۔سی چاہئے تھا لیکن اس پی جی میں اے ۔سی تو دور کی بات کولر بھی ایسے تھے کہ اس کی پنکھڑی کی جالی پر منھ بھی رکھ دیں تو ہوا نہ آئے۔

بڑی جدوجہد کے بعد کمرا بدلا ،وارڈن نے اے۔سی لگوایا پر اس کے ساتھ ہی کرایہ بھی برھایا ۔اس کمرے میں جاکر ملی نایاب پروسی ۔پیشے ڈاکٹر تھی دیکھنے بیحد صف ستھری۔اپنے کمرے میں رہتی ،باقی کمروں سے الگ اس کا کمرہ تھا جس میں ہر سہولت تھی۔کولر باقی کمروں سے بڑا ۔کمرے میں ایک اور زیادہ وارڈ روب۔اپنا فریج ،صرف بات یہ ہے کہ اس کا کمرا نہیں پورا گھر تھا۔اس کے کمرے کے ٹھیک سامنے میرا کمرہ تھا۔جس میں ایک سال رہی۔پورے سال اس کے کمرے میں کسی لڑکی کو جاتے نہیں دیکھا۔

وہ کمرے میں کسی کو گھسنے نہیں دیتی تھی۔اس پی جی میں ہفتہ وار شیڈیول کے مطابق واش روم صاف ہوتا۔وہ کمرہ بھی آؤٹ سائڈر سے صاف نہ کراتی۔کھانا اکیلے کھاتی۔اپنا کوڑا بھی فلور کے کامن کوڑے دان میں ڈالنا پسند نہیں کرتی تھی۔اپنے کمرے کے باہر الگ کوڑے دان رکھتی۔مانو اس کا کوڑا بھی خاص ہو۔

ایک روز اس کا ڈسٹبن بلی نے توڑ دیا تو بھی کوڑا کامن کوڑے دان میں نہ ڈال کر اسی ٹوٹے ڈسٹبن میں دالتی۔سنیٹری پیڈ تک کھلے ڈسٹبن میں ڈالتی۔اپنا کمرا ندر سے جتنا صاف رکھتی باہر اتنی ہی گندگی مچاتی۔

اس کی شکایت کرنے پر پی جی مالکن کے کان پر جوں تک نہ رینگتی تھی کیونکہ وہ باقیوں سے 100۔50 روپئے اوپر کرایہ دیتی تھی۔ایک شام اس کے کمرے سے تیزی سے بحث کی آواز آئی۔

لانڈری والی آنٹی باہر نکلتے ہوئے بولی میں گارنٹی کے ساتھ کہہ رہی ہوں ،یہ مہینے کا داغ ہفتے بھر پرانا ہے۔گزشتہ ہفتے مجھے لگتا تھا آپ کی بیڈ کی چادر کچھ ڈیزائن ہے لیکن یہ تو خون ہی ہے اور آپ حیض کے خون لگی چادر پر ہفتے بھر سے سو رہی ہیں۔ہر مہینے کا یہی تماشہ رہتا ہے آپ کا ۔اس دوپہر مجھے معلوم چلا اس بے تحاشہ صفائی پسند لڑکی کی یہ حقیقت تھی۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close