بہارمتھلانچل

چار سال سے چل رہا تھا معاشقہ ،لوگوں نے دونوں کا کرادیا نکاح

موتیہاری: محبت اگرسچی ہوتوانسان کسی بھی حدکوعبورکرسکتاہے یہ معاملہ ڈھاکہ بلاک کے پچپکڑی اوپی حلقہ کے روپولیاگاؤں میں لوگوں کی موجودگی میں محبت کرنے والے دونوں کانکاح کرادیا اور لڑکے کے ساتھ لڑکی کی رخصتی بھی کردی گئی۔ ملی جانکاری کے مطابق روپولیاگاؤں کے رہنے والے رفیق میاں کی لڑکی رومیسہ خاتون کی نظرضلع کے شکارگنج تھانہ حلقہ کے لہن ڈھاکہ(بھلوہیا)گاؤں کے رہنے والے احمدمیاں کالڑکاصدام صدیقی کے ساتھ تین چارسال پہلے ہی آنکھ لڑگئی اورایک دوسرے کودل وجان سے چاہنے لگے اورجدیددورمیں سب سے زیادہ استعمال ہونے والے موبائل سے گفتگوہونے لگا۔دراصل لڑکے کا نانیہال لڑکی کے گاؤں روپولیامیں ہے جس کی وجہ سے لڑکے کاآناجانالگارہااس درمیان لڑکے ولڑکی کی نظرایک دوسرے پرپڑی اورمحبت پروان چڑھتاگیا۔دونوں ایک دوسرے سے چوری چھپکے ملتے رہے۔ جب یہ بات گاؤں کے لوگوں تک پہونچی توبات بننے کے بجائے بگڑنے لگا۔اس کی خبرپچپکڑی پنچایت کے سابق مکھیاشوہراورصحافی سنجئے ٹھاکراورچریاتھانہ کے مجلواگاؤں کے رہنے والے سماجی کارکن سجاول رائے تک گئی توان لوگوں نے بممئی میں کام کررہے لڑکے کوبلایانکاح کرنے کی صلاح دی۔اس کے بعدسجئے ٹھاکرکے دروازے پرلڑکااورلڑکی کامسلم رسم ورواج سے قاضی صاحب اورمسجدکے امام کے ذریعے نکاح کرادیاگیا۔ نکاح کے بعدشام کولڑکی کی رخصتی کردی گئی۔اس موقع پرسماجی کارکنان سنجئے ٹھاکر،آلوک کمارسنگھ،صلاح الدین میاں،آلوک کمارسنگھ،تبارک حسین،محمدنظام الدین، اومیش ٹھاکر،اوپیندرپاسوان،صحافی عظیم اقبال سمیت بڑی تعداد میں لوگ وخواتین موجودتھے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close