متھلانچل

ڈی ایم نے کیا بینی پورنگر پریشد کی نئی عمارت کا معائنہ

عمارت میں جلد شہری سہولیات فراہم کرانے کا دیا حکم

دربھنگہ :نگر پریشد بینی پور کی نئی عمارت میں شہری سہولیات کا خصوصی طو ر پر نظم کیا جائے تاکہ مختلف کامو ںسے یہاں پہنچنے والوں کو کوئی دشواری پیش نہ آئے ۔ ضلع مجسٹریٹ ڈاکٹر چندر شیکھر سنگھ نے نگر پریشد بینی پور کی نئی عمارت کے معائنہ کے دوران ایزکیٹو افسر کو مذکورہ ہدایات دئیے ۔ انہو ںنے گھوم گھوم کر عمارت اور یہاں موجود سہولیات کا جائزہ لیا ۔ شہریوں کو دی جانے والی سہولیات سے متعلق بورڈ بھی مناسب جگہ پر لگانے کا حکم دیا ۔ نگر پریشد کے تحت چل رہے پروگرام اور منصوبوں کے جائزہ میں ضلع مجسٹریٹ نے نگر پریشد کیلئے ضروری تمام طرح کے امکانات کو بڑھانے کامشورہ دیا ۔ انہو ں نے اشتہار ٹیکس ، جائیداد ٹیکس وغیرہ کے توسط سے بھی داخلی وسائل میں بڑھوتری کرنے کو کہا ۔ ضلع مجسٹریٹ نے کہا کہ حسب ضرورت جے سی بی سمیت دوسری ضروری مشین ، موبائل ٹائلٹ وغیرہ کانظم کیا جائے گا ۔ نگر پریشد حلقہ کے تحت ہر گھر نل کا جل ، گھر تک پختہ نالی گلی اور بیت الخلاء تعمیر میں پیش رفت کابھی جائزہ لیا گیا ۔ نل کا جل کے معائنہ میں پایا گیا کہ نگر پریشد کے 29وارڈوں میں سے ۹ وارڈمیں بورنگ کاکام مکمل ہوگیا ہے ۔ چار وارڈ میں پائپ بچھانے کاکام چل رہا ہے جس میں تیزی لانے کا حکم دیا گیا ۔ اس منصوبہ میں اعلی کوالیٹی کا پائپ اور دوسرے سامان استعمال کریں ۔ اب تک ہوئے کامو ںکا انجینئر کے ساتھ معائنہ کرکے کوالیٹی رپورٹ دستیاب کرانے کا حکم بھی ایزکیٹو افسر کو دیا گیا ۔ پکی نالی گلی سے متعلق 37منصوبے ٹینڈر کے مرحلہ میں ہے اسے جلد پورا کرلینے کا حکم دیا گیا ۔ نگر پریشد میں کھلے میں رفع حاجت سے نجات کیلئے بیداری پروگرام چلانے پر زور دیا گیا ۔ شہری آواس منصوبہ کا محکمہ کی ہدایات کے مطابق زمین پر اتارنے کو کہا گیا ۔ جائزہ میں پایا گیا کہ شہری آواس منصوبہ کے 4319رہائش منظور ہوئے ہیں جس میں سے 1818مستحقین کو پہلی قسط کی رقم مل گئی ہے ۔ بچے مستحقین کو بھی جلد ہی پہلی قسط کی رقم دستیاب کرادینے کا حکم دیا گیا ۔ ضلع مجسٹریٹ نے نگر پریشد کے تحت ٹاؤن ہال ، ڈمپینگ یارڈ سمیت شہری سہولیات کیندر تعمیر کیلئے کاروائی کرنے کو کہا ۔ اس موقع پر ضلع مجسٹریٹ نے عام لوگوں کی شکایتیں سنیں اور اس کا حل نکالا ۔ بیٹھک میں نگرپریشد کے چیف پارشد ، نائب چیف پارشد ، ایزکیٹو افسر سمیت متعلقہ افسران موجود تھے ۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close