ہندوستان

کرنل پروہت کی عرضی مسترد

نئی دہلی:سپریم کورٹ نے 2008کے کالیگاوں دھماکہ معاملے میں کرنل شری کانت پروہت کو مبینہ طورپر اغواکرنے کی جانچ ایس آئی ٹی سے کرانے سے متعلق ان کی عرضی آج مسترد کردی۔جسٹس رنجن گوگوئی کی صدارت والی تین رکنی بنچ نے کرنل پروہت کی عرضی مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اس معاملے کی سماعت نچلی عدالت میں چل رہی ہے او رایسی صورت میں وہ مداخلت نہیں کرے گا۔عدالت نے تاہم عرضی گذار کو اپنا مطالبہ نچلی عدالت کے سامنے پیش کرنے کی اجازت دے دی ۔ عدالت نے کہا کہ ’اگر ہم اس وقت مداخلت کریں گے تو سماعت متاثر ہوسکتی ہے۔‘کرنل پروہت کی طرف سے پیش سینئر وکیل ہریش سالوے نے دلیل دی کہ عرضی گذار نے جو معاملہ اٹھایا ہے اس پرتوجہ دی جانی چاہئے۔ اس پر جسٹس گوگوئی نے کہا کہ عرضی گذار اپنی بات نچلی عدالت میں پیش کرے۔اس سے قبل گذشتہ 27اگست کو جسٹس ادے امیش للت کے سماعت سے الگ ہونے کی وجہ سے نئی بنچ کی تشکیل تک سماعت ملتوی کرنی پڑی تھی۔
عرضی گزار نے اپنی درخواست کو خود کو سازش کے تحت ملوث کرنے کا الزام لگاتے ہوئے عدالت کی نگرانی میں ایس آئی ٹی سے جانچ کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔
عدالت عظمی نے گذشتہ سال کرنل پروہت کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دیا تھا ۔ وہ پچھلے نو سال سے جیل میں تھے۔ سپریم کورٹ نے بمبئی ہائی کورٹ کے فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے ضمانت دے دی تھی۔خیال رہے کہ 29ستمبر 2008 کو مالیگاوں میں ایک بائک میں بم دھماکہ کیا گیا تھا جس میں آٹھ لوگوں کی موت ہوگئی تھی او رتقریباً اسی افراد زخمی ہوئے تھے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close