اتر پردیش

کلیم تیاگی کی والدہ کے انتقال پرمظفر نگر کی سرکردہ تنظیموں نے تعزیتی میٹنگ کرمرحومہ کو خراج عقیدت پیش کیا

مظفر نگر:مولانا مہربان علی (مرحوم)سابق جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء ضلع مظفر نگر تقریبا ۴؍ سال پہلے اس دار فانی کو خیر باد کہہ کر رب حقیقی سے جا ملے مو لانا کی خد مات ضلع کے عوام و خواص سے مخفی نہیں ہے ہمیشہ جمعیۃ علماء کے توسل سے ملی و قومی خد مات میں سرگرم رہے مولانا کے اس دنیا سے رخصت ہوجانے کے بعد آج تک ان کی کمی کو محسوس کیا جا رہا ہے ابھی تک مولانا کی جدائی کو ان کے اہل خانہ و متعلقین بھلا بھی نہ پا ئے تھے کہ مولانا مرحوم کی اہلیہ نے اس دارفانی کو خیر باد کہہ دیا جس کی وجہ سے اہل وعیال قرب و جوار متعلقین پر ایک اور غم کا پہاڑ ٹوٹ پڑاواضح ہو کہ مولانا مرحوم کی اہلیہ کلیم تیاگی ،قاری سلیم مہربان ،وسیم تیاگی کی والدہ یو ں تو پچھلے کئی برسوں سے بیماری میں مبتلا تھیں مگر انتقال سے ۵؍ روز پہلے سے طبیعت بگڑتی گئی اور ۲؍ دسمبر کو سبھی کو روتا بلکتاہوا چھوڑ کر اس دنیا سے رخصت ہو گئی مرحومہ کی ۷۰ سال عمر تھی صوم و صلواۃ کی پابند اور با اخلاق خاتون تھیں مرحومہ کی نماز جنازہ مولانا ذکر شاہی امام نے اداکرائی گاؤں برلہ کے قبرستان میں تدفین عمل میں آئی ان کے انتقال پر جہاں بہت سے دینی اداروں میں قرآن کریم کی تلاوت کے بعد ایصال ثواب کا سلسلہ جاری ہیں وہیں آج شمیم قصار کی رہائش گاہ شہید چوک مظفر نگر میں مظفر نگر کی سرکردہ تنظیموں نے یکجا ہو کر تعزیتی میٹنگ کی جس میں مرحومہ کے لئے ایصال ثواب کے بعد خراج عقیدت پیش کیاجن میں اردو ڈیو لپمنٹ آر گنائزیشن،سیکیو لر فرنٹ،ہیو مینٹی ویلفئیر سوسائٹی،اردو انوادک راجیہ کرمچاری سنگھ،اردو ٹیچر ایسو سی ایشن،ساماجک ویلفئیر سوسائٹی،جمعیۃ علماء کے ارکان شامل رہے اس موقع پر ڈاکٹر شمیم الحسن نے مولانا مہربان علی مرحوم کی زندگی پر مختصر روشنی ڈالی کہا کہ آج ان کی اہلیہ ہمارے درمیان سے ہمیشہ کے لئے رخصت ہو گئیں انہوں نے تمام احباب سے درخواست کی ہے کہ مولانا اور ان کی اہلیہ تو ہمارے درمیان نہیں رہے مگر اب ہماری ذمہ داری ہے کہ ان کی اولادوں کا ہم خیال رکھیں جن میں کلیم تیاگی ،قاری سلیم مہر بان ،وسیم تیاگی ان کے ساتھ ہم ہمدردی کا اظہار کریںیہی مو لانا اور انکی اہلیہ کے لئے سچی خراج عقیدت ہو گی مولانا مو سی قاسمی نے کل نفس ذائقۃ الموت کے حوالے سے کہا کہ میرے رب کا فرما ن ہے کہ ہر جاندار کو موت کا ذئقہ چکھنا ہے ہماری ذمہ داری ہے جو اس دنیا سے چلا گیا اس کے لئے ہم دعائے مغفرت کریں کلیم تیاگی نے بھی اس موقع پر تمام احباب کا شکریہ اداکیا کہا کہ جس طرح سے اپنی حیات میںوالد محترم نے ہمیں اپنی شفقت و محبت کا ہمیشہ سہارا دیا اسی طرز پر والدہ نے ہمیں اپنی محبتوں سے نوازا والد مرحوم کی کمی کو محسوس نہیں ہونے دیاتعزیتی میٹنگ میں قرآن کی تلاوت کے بعد ایصال ثواب کیا گیا بعدہ اجتماعی طورپر ڈاکٹر شمیم الحسن نے دعائے مغفرت کی اس موقع پر مولانا موسی قاسمی،قاری شاہد حسینی ،قاری سلیم مہربان،گوہر صدیقی،محمد گلفام،ماسٹر رئیس الدین رانا،حاجی محمد اوصاف،بدرالزماں خان،شمیم قصار،محمد شاہ ویز،شاہ عالم،تحسین علی اساروی وغیرہ نے شرکت کی.
(رپورٹ شاہدحسینی)

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close