سیاستہندوستان

ہتھیاروں کے دلال مجھے نشانہ بنا رہے ہیں: نریندر مودی

نئی دہلی: وزیر اعظم نریندر مودی نے جمعرات کو کہا کہ ہتھیار سودے کے دلال اور بچولیے انہیں انفرادی طور پر نشانہ بنا رہے ہیں اور اس کام میںملک و بیرون ملک میں سرگرم بہت سے لوگ ان کا ساتھ دے رہے ہیں۔وزیر اعظم نے کہا کہ کانگریس حکومت کے دوران بدعنوانی کو ادارہ جات کی حیثیت حاصل تھی، ان کی حکومت نے ایمانداری کو ادارہ کی شکل دینے کی کوشش کی ہے۔تمل ناڈو کے بھارتیہ جنتا پارٹی کارکنوں کے ساتھ ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے بات چیت کرتے ہوئے مودی نے کہا کہ دفاعی خریداری میں کانگریس حکومت کے دوران بہت سے دلال اور بچولیے کام کر رہے تھے۔ ان کے خلاف جب انہوں نے صفائی مہم چلائی تو انہیں اس بات کا علم تھا کہ یہ کتنا خطرناک کام ہے۔ یہ دلال اور بچولیے بہت طاقتور ہیں اور معاشرے کے مختلف شعبوں میں ان کے مددگار موجود ہیں۔ جب ان کا دھندہ بند ہوا تو انہوں نے مجھے اور میری ساکھ پر حملہ بولا دیا۔ وزیراعظم نے کہا کہ ان کے اوپر چاہے کتنا ہی کیچڑ کیوں نہیں اچھالا جائے ،وہ ملک کی حفاظت کے نظام کو مضبوط بنانے کے لئے کوشش جاری رکھیں گے۔
مودی نے کہا کہ بدانتظامی اور بدعنوانی سے بھی زیادہ تشویشناک بات اس پارٹی کی طرف سے دفاعی شعبے کو پہنچایا گیا نقصان تھا۔ کوئی بھی دفاع سے متعلقخریداری اس وقت تک نہیں ہوتی تھی جب تک کہ سودے بازی نہیں ہو جائے۔ سودے بازی کے اس کھیل میں قومی سلامتی کے ساتھ کھلواڑ کیا گیا۔ دفاعی سامانوں کی خرید دلال اور بچولیوں کا اڈہ بن گیا تھا۔ وزیراعظم نے کہا کہ قومی مفاد کو ترجیح دیتے ہوئے انہوں نے ایسے عناصر کا خاتمہ کیا اور فوج کے لئے ضروری ہتھیاروں کی خریداری کا کام آگے بڑھایا۔
ہتھیاروں کے دلال کرشچینشیل کا ذکر کرتے ہوئے مودی نے کہا کہ بھارت لائے جانے کے بعد سے یہ دلال نئے نئے انکشافات کر رہا ہے۔ یہ حقیقت سامنے آ رہی ہے کہ رافیل جنگی طیاروں کی خریداری کا کام دس سال تک اس وجہ سے رکا رہا کیونکہ کانگریس پارٹی اور اس کے لیڈر سودے بازی نہیں کر پائے۔ پڑوسی ممالک نے اپنی فضائیہ کی طاقت کافی بڑھا لی لیکن اس وقت حکومت نے ہندوستانی فضائیہ کے مطالبے پر کوئی کارروائی نہیں کی۔
وزیر اعظم نے الزام لگایا کہ مشیل کے تعلقات کانگریس پارٹی پر قابض خاندان سے ہیں۔ ملک کو جاننے کا حق ہے کہ مشیل کوکابینہ کی دفاع سے متعلق کمیٹی کے اجلاس کی معلومات کون دیتا تھا۔ مشیل کو یہ کس طرح پتہ چلتا تھا کہ دفاعی خریداری کی فائل کہاں پہنچ رہی ہے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ مشیل کانگریس لیڈروں پر اثر رکھتا تھا۔
مودی نے کہا کہ تمام دلال اور بچولیے غیر ملکی نہیں ہیں۔ ملک میں بھی بہت سے ‘دلال ماما’ ہیں جو حکومت کے عوامی فلاح کے منصوبوں کا پیسہ ہڑپ جاتے ہیں۔ فائدہ اٹھانے والوں تک بینک میں براہ راست پہنچانے کے ذریعے اس دلال اور بچولیوں کا دھندہ بند کیا گیا ہے، اسی لئے وہغصہ میں بیٹھے ہیں۔ بینک میں براہ راست ادائیگی کے ذریعے 90 ہزار کروڑ روپے کی ہیرا پھیری روکی گئی ہے۔ جن کو نقصان پہنچا ہے وہ لوگ ان کی حکومت کے خلاف متحرک ہوکر پروپیگنڈے مہم چلا رہے ہیں۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close